ریڈکراس کے کارکنان پر ’داعش کا حملہ’

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption 2013 میں ریڈکراس کے جلال آباد دفتر کو طالبان نے نشانہ بنایا (فائل فوٹو)

افغانستان میں حکام کا کہنا ہے کہ ملک کے شمالی صوبے جاؤجزان میں ریڈ کراس کے چھ افغان کارکنان نام نہاد دولت اسلامیہ کے ایک حملے میں ہلاک ہوگئے ہیں۔

مقامی گورنر نے بی بی سی کو بتایا کہ ہلاک شدگان کو کش تپا کے علاقے میں گولی مار کر ہلاک کیا گیا۔ اُنہوں نے مزید کہا کہ دو کارکنان لاپتہ ہیں اور ان کے بارے میں خدشہ ہے کہ انہیں شدت پسند گروہ نے اغوا کر لیا ہے۔ ریڈ کراس نے ہلاکتوں کی تصدیق کی ہے مگر کہا کہ وہ نہیں جانتے کے حملے کے لیے کون ذمہ دار ہے۔

شدت پسند تنظیم دولت اسلامیہ 2015 سے افغانستان میں فعال ہے اور اس گروہ نے ملک کے مشرقی حصے اور کابل میں حالیہ حملوں کی ذمہ داری قبول کی ہے۔ فی الحال اس حملے کی ذمہ داری کسی نے قبول نہیں کی ہے۔

ماضی میں طالبان کے شدت پسندوں نے ریڈ کراس کو نشانہ بنایا ہے اور انہوں نے 2013 میں ان کے جلال آباد کے دفاتر پر حملہ کیا تھا۔