’20 درہم کماتے ہیں، شرٹیں کہاں سے خریدیں‘

پاکستان سپر لیگ
Image caption دبئی میں کھیلوں کا سامان فروخت کرنے والی زیادہ تر دکانوں پر پاکستان سپر لیگ سے جڑی اشیا فروخت کے لیے موجود ہی نہیں ہیں اور جن کے پاس ہیں بھی تو وہ گذشتہ سال کی ہی ہیں

متحدہ عرب امارت میں جاری دوسری پاکستان سپر لیگ کے حوالے سے یہاں لوگوں میں تھوڑا بہت جوش و خروش تو ضرور ہے لیکن یقیناً ویسا نہیں جیسا پاکستان میں اس لیگ کے ہونے سے ہو سکتا تھا۔

پاکستان سپر لیگ کے میچ دبئی اور شارجہ میں کھیلے جا رہے ہیں جنھیں دیکھنے کے لیے زیادہ تعداد یہاں ملازمت کرنے والے پاکستانیوں کی ہے۔

آپ دبئی کی سڑکوں پر نکلیں اور وہاں گھومنے والوں سے پی ایس ایل کے حوالے سے کوئی سوال پوچھیں تو جواب میں وہ آپ سے سوال کرتے ہیں 'یہ کیا ہے، ہم تو نہیں جانتے۔'

لیکن اگر یہی لیگ پاکستان میں ہو رہی ہوتی اور آپ کراچی، لاہور، راولپنڈی اور اسلام آباد میں یہ سوال کرتے تو جواب مختلف ہوتا۔

’پی ایس ایل سے کاروبار پر فرق تو پڑتا ہے‘

دبئی میں کھیلوں کا سامان فروخت کرنے والی زیادہ تر دکانوں پر پاکستان سپر لیگ سے جڑی اشیا فروخت کے لیے موجود ہی نہیں ہیں اور جن کے پاس ہیں بھی تو وہ گذشتہ سال کی ہی ہیں۔

کھیلوں کا سامان فروخت کرنے والے ایک دکاندار سے جب اس حوالے سے پوچھا تو ان کا کہنا تھا 'اب تو لوگ آن لائن ہی خریداری کر لیتے ہیں۔'

Image caption مجھے اس بات کی توقع نہیں تھی کہ اس بار پی ایس ایل کی ٹیموں کے یونیفارم تبدیل ہو جائیں گے: محمد نعمان رضا

محمد نعمان رضا نامی دکاندار کا کہنا تھا کہ انھیں اس بات کی توقع نہیں تھی کہ اس بار پی ایس ایل کی ٹیموں کے یونیفارم تبدیل ہو جائیں گے، اس لیے انھوں نے گذشتہ سال کے یونیفارم ہی فروخت کرنے کے لیے منگوا لیے تھے۔

ان کا مزید کہنا تھا 'گذشتہ سال کی نسبت اس بار شرٹس کم فروخت ہو رہی ہیں اور گذشتہ سال کی طرح کاروبار نہیں ہے۔'

اسی حوالے سے ملازمت کے لیے آئے چند پاکستانیوں سے بات کی تو ان میں سے ایک شخص نے اپنا نام نہ بتانے کی شرط پر بتایا 'ہم دن کے 20 درہم کماتے ہیں، شرٹیں کہاں سے خریدیں اور میچ کہاں سے دیکھیں۔'

Image caption گذشتہ سال کی طرح اس بار کاروبار نہیں ہے: محمد نعمان رضا

ان کا کہنا تھا کہ پیسے مل بھی جائیں تو اتنا وقت ہی نہیں ملتا کہ میچ دیکھنے جائیں۔

جو لوگ میچ دیکھنے جاتے ہیں وہ سٹیڈیم کے قریب ہی بسنے یا ملازمت کرنے والا طبقہ ہے کیونکہ سٹیڈیم تک جانے کے لیے بھی آپ کو اچھا خاصہ راستہ طے کرنا پڑتا ہے۔

پاکستان سپر لیگ کے بعد میچوں کا دوبارہ آغاز شارجہ میں ہوگا جہاں عام طور پر پاکستانیوں کی ایک بڑی تعداد میچ دیکھنے کے لیے آتی ہے۔

گذشتہ سال بھی شارجہ میں ہی تماشائیوں کی ایک بڑی تعداد پی ایس ایل کے میچز دیکھنے آئی تھی اور انتظامیہ کو اس بار بھی ایسے ہی ہجوم کی امید ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں