فیفا کے ایک اعلی عہدیدار شیخ احمد الفہد دھوکہ دہی کے الزامات کے بعد مستعفی

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption 53 سالہ شیخ احمد فیفا کی رولنگ کونسل کے رکن اور پبلک کونسل آف ایشا کے صدر تھے

فیفا کے ایک اعلی عہدیدار شیخ احمد الفہد الصباح نے دھوکہ دہی کے الزامات سے انکار کے ایک دن بعد استعفیٰ دے دیا ہے۔

میڈیا میں آنے والی رپورٹس کے مطابق ان کا تعلق فیفا کے سابق آڈٹ اور تعمیل کی کمیٹی کے رکن رچرڈ لائی سے بتایا گیا ہے جن پر رشوت ستانی کے الزام میں پابندی عائد کی گئی ہے۔

لائی نے جمعرات کو امریکی عدالت میں نو لاکھ پچاس ہزار ڈالر کی رشوت لینے کا اعتراف کیا تھا۔

شیخ احمد نے ایک بیان میں کسی بھی غلط کام کے ارتکاب سے انکار کیا تھا۔

53 سالہ شیخ احمد فیفا کی رولنگ کونسل کے رکن اور پبلک کونسل آف ایشا کے صدر تھے اور انھوں نے سنیچر کو کہا تھا کہ وہ میڈیا میں آنے والی افواہوں سے با خبر ہیں اور ان کے بقول وہ ان الزامات پر حیران ہیں۔

عدالتی دستاویزات میں شیخ احمد کو براہِ راست نامزد نہیں کیا گیا تھا تاہم کہا گیا تھا کہ ایسی شخصیت ہیں جو فیفا، کویت فٹ بال ایسوسی ایشن اور اولمکپس آف ایشیا کونسل کے اعلی عہدے دار ہیں۔

اپنے ایک دوسرے بیان میں انھوں نے استعفے کے اعلان کے ساتھ کہا کہ ایسا انھوں نے فیفا کے مفاد میں کیا ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ ’رچرڈ لائی کی غیر قانونی ادائیگیوں کے حوالے سے میں اپنا پچھلا بیان دہراؤں گا کہ میں نے کوئی غلط کام نہیں کیا۔ ‘

’میں اس حوالے سے متعلقہ حکام سے بات کروں گا تاکہ یہ غلط ثابت ہو ، میرے لیے یہ الزامات حیران کن ہیں۔‘

’تاہم میں نہیں چاہتا کہ ان الزامات کی وجہ سے ایشیئن فٹ بال کنفیڈریشن اور فیفا کے کانگرس میں تفریق پیدا ہو۔ اس لیے میں فیفا کے بہترین مفاد میں فیفا کونسل کے امیدوار کی حیثیت سے نام واپس لیتا ہوں اور فٹ بال کے دونوں عہدوں سے استعفیٰ دیتا ہوں۔ ‘

شیخ احدم کا کہنا تھا ’جب یہ الزامات غلط ثابت ہو جائیں گے میں فٹ بال کے لیے اپنی خدمات جاری رکھوں گا۔‘

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں