’میں سلمان کو جانتا تھا، اسے برین واش کیا گیا تھا‘

Image caption محمد الشریف سنہ 2011 میں مانچیسٹر سے لیبیا چلے گئے تھے

لیبیا میں ایک جنگجو نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ وہ مانچیسٹر میں خود کش حملہ کرنے والے سلمان عبیدی کو جانتے تھے اور وہ ایک وقت میں اچھے دوست بھی رہ چکے ہیں۔

بی بی سی کے نامہ نگار کوئنٹن سمرویئل نے محمد الشریف سے لیبیا میں ملاقت کی۔

مانچیسٹر حملہ: سلمان عبیدی کون تھا؟

’والدہ کو بیٹی کی موت کی خبر دے دی گئی‘

’ایم آئی فائیو کو عبیدی کے بارے میں تین بار خبردار کیا گیا تھا‘

ان کا تعلق بھی مانچیسٹر سے ہے اور وہ 2011 میں اسلامی شدت پسندوں جن میں خود کو دولست اسلامیہ کہنے والی تنظیم دولت اسلامیہ بھی شامل ہے سے لڑنے کے لیے لیبیا آگئے تھے۔

الشریف نے بتایا کہ ان کی آپس میں پانچ برس سے ملاقات نہیں ہوئی تھی۔

ان دونوں دوستوں نے لیبیا کی جنگ میں مختلف فریقین کی حمایت کی۔

محمد الشریف کا کہنا ہے کہ سلمان کو برین واش کیا گیا تھا۔

ان کا کہنا ہے 'مجھے یقین ہے کہ سلمان کا دولت اسلامیہ سے رابطہ لیبیا میں ہوا تھا۔'

Image caption الشریف نے فون پر ایک تصویر میں سلمان عبیدی کی نشاندہی بھی کی (دائیں جانب سے تیسرے نمبر پر)

سنہ 2011 میں کرنل قذافی کے خلاف بغاوت میں حصہ لینے کے لیے کئی نوجوان برطانیہ سے لیبیا گئے تھے۔

الشریف نے بتایا کہ 'اس وقت جو بھی لیبیا آنا چاہتا تھا وہ آسکتا تھا۔'

الشریف کہتے ہیں کہ 'میں تین سال سے زیادہ عرصے سے جنگ لڑ رہا ہوں۔۔۔ میں نے بہت زیادہ خون دیکھا ہے لیکن میں جا کر اپنے آپ کو (دھماکے سے) نہیں اڑاؤں گا۔'

مانچیسٹر خود کش حملے پر لیبیائی جہادی عناصر کی چھاپ

محمد آج بھی لیبیا میں دولت اسلامیہ کے خلاف لڑ رہے ہیں۔

محمد کا کہنا ہے کہ دولت اسلامیہ اندرون ملک بھرتیاں کرنے کی کوشش کرتی ہے۔

ان کا کہنا تھا ' ایسے لوگ ہیں جو ایسے نوجوانوں کی تلاش میں رہتے ہیں جو خود کو اڑا سکیں، ایسے کام کر سکیں۔'

Image caption الشریف کو ایک ویڈیو میں دوسرے جنگجوؤں کے ساتھ گاڑی میں بیٹھے آئس کریم کھاتے دیکھا کجا سکتا ہے

'وہ ان کو ڈھونڈتے ہیں، راضی کرتے ہیں اور ان سے یہ کام کروا لیتے ہیں۔'

ان کا کہنا ہے کہ وہ خود کو دولت اسلامیہ کہنے والی شدت پسند تنظیم کی سوچ اور نظریے کے خلاف ہیں۔

انہیں خود دولت اسلامیہ کی شدت پسندوں کی لاشوں کی بے حرمتی کرتے بھی فلم بند کیا گیا ہے جس بارے میں ان کا کہنا ہے کہ انہیں ایسا کرنے پر افسوس ہے لیکن وہ موت کے مستحق ہیں۔

'وہ موت کے مستحق ہیں کیوں کہ انہوں نے کئی افراد کو قتل کیا ہے۔'

اسی بارے میں