'شہنشاہ جذبات' شادی کی گولڈن جوبلی پر جذباتی ہو گئے

دلیپ کمار اور سائرہ بانو تصویر کے کاپی رائٹ Dilip Kumar
Image caption دلیپ کمار اور سائرہ بانو

'شہنشاہ جذبات' کے لقب سے معروف بالی وڈ اداکار دلیپ کمار نے اپنی شادی کی گولڈن جوبلی پر ایک بار پھر اپنے ہونے کا احساس دلایا ہے۔

اس کے ساتھ ہی انھوں نے یہ بھی منوا لیا ہے کہ عمر ڈھلنے سے ان کی جذبات کی تمازت کم نہیں ہوئی۔

سوشل میڈیا کا سہارا لیتے ہوئے انھوں نے ٹوئٹر پر اداکارہ سائرہ بانو کے ساتھ اپنی رفاقت کی داستان رقم کی ہے۔ خیال رہے کہ دونوں کی شادی 11 اکتوبر سنہ 1966 کو ہوئی تھی۔ اس کے ساتھ انھوں نے کئی یادگار تصاویر بھی شيئر کی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Dilip Kumar
Image caption دلیپ کمار اور سائرہ بانو کی شادی 11 اکتوبر سنہ 1966 کو ہوئی تھی

انھوں نے اس موقعے پر ایک ویڈیو بھی ریلیز کی جو ان کے مداحوں نے ان کے لیے تیار کی تھی۔

انھوں نے لکھا: ’اللہ رحیم ہے۔ سائرہ اور ہم رفاقت کے 50 شاندار سال مکمل کر رہے ہیں۔ ہمیں ہزاروں خطوط، پیغامات اور فون کالز موصول ہو رہی ہیں۔‘

انھوں نے لکھا کہ 'ایک محبت جو 50 سال سے زیادہ عرصے سے مضبوطی کے ساتھ قائم ہے، اس کرم کا شکر کیسے ادا کروں۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Dilip Kumar
Image caption دلیپ کمار اور سائرہ بانو نے کئی فلموں میں ایک ساتھ کام کیا ہے

انھوں نے جہاں اپنے جذبات کے اظہار کے لیے اشعار کا سہارا لیا ہے وہیں بنگالی اور انگریزی کے معروف لکھاری نوبیل انعام یافتہ ادیب ربندرناتھ ٹیگور کا قول بھی نقل کیا ہے: ’وقت گزر رہا ہے، اس کا احساس رہے اور پیار کرو۔۔۔ میرے محبوب میں تمہاری پناہوں میں آتا ہوں۔‘

انھوں نے سائرہ بانو کے لیے ٹویٹ کی: ’بنت ماہتاب ہو گردوں سے اتر آئی ہو۔۔۔ تیری آواز کے سائے تیرے ہونٹوں کے سراب۔'

دلیپ نے اپی اور سائرہ کے متعدد تصاویر یہ کہہ کر شیئر کی ہیں: 'آج ہم نے اپنے البم پر نظر ڈالی، چند نایاب تصاویر آپ کی نذر ہیں۔'

Image caption دلیپ کمار کی زندگی کے نشیب و فراز میں سائرہ ان کے ساتھ رہیں

انھوں نے ایک اور ٹویٹ میں جہاں اپنے مداحوں کا شکریہ ادا کیا، وہیں لکھا: 'کہانی کو پھر سے دہراتے ہیں چلو۔'

جسبِ معمول ان کی تمام ٹویٹس اردو اور انگریزی زبان میں ہیں۔ بعض ٹویٹس میں انھوں نے اردو اور انگریزی کو ملا دیا ہے۔ ایک ٹویٹ میں انگریزی میں لکھتے ہیں: ’جب تک میں تم سے ملا نہ تھا،‘ اس کے بعد انھوں نے مجاز کے ایک شعر کے ٹکڑے کا سہارا لیا ہے: ’تسکینِ دلِ محزوں نہ ہوئی۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Dilip Kumar
Image caption دلیپ کمار کو پاکستان کے اعلیٰ ترین شہری ایوارڈ نشان امتیاز سے نوازا جا چکا ہے

اسی طرح انھوں نے فیض کی ایک نظم سے بھی استفادہ کیا ہے: 'دشت تنہائی میں اے جان جہاں لرزاں ہیں ۔۔۔ تیری آواز کے سائے ، تیرے ہونٹوں کے سراب۔'

ان کے ہزاروں چاہنے والوں نے ان کو یاد کیا اور دعائیں دیں۔ ایک نے لکھا: 'شاید آج آپ اپنے موڈ میں ہیں۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Dilip Kumar

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں