آئندہ سینما مالکان چھلانگ لگانے سے پہلے دو بار سوچیں گے!

سینیما گھر تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption تجزہہ کاروں کا خیال ہے کہ جب سے انڈین فلموں کی نمائش پر پابندی لگائی گئی، پاکستانی سینیما گھروں کی آمدنی تقریباً 60 فیصد گر گئی تھی

آخر کار وہی ہوا جو ہونا تھا۔ پاکستانی سینیما مالکان نے19 دسمبر سے دوبارہ انڈین فلموں کی نمائش کا سلسلہ شروع کرنے کا اعلان کردیا۔ لیکن اس تین ماہ کی خودساختہ بندش نے پاکستانی فلمی صنعت میں کیا گُل کھلائے، اسے نظرانداز نہیں کرنا چاہیے۔ اس بندش کے نفع و نقصان کا حساب کرنا اس لیے بھی ضروری ہے کہ آئندہ ایسے قدم اُٹھانے سے پہلے شاید کوئی ذرا سوچ بھی لے۔

پچھلے تین ماہ کے دوران، یعنی جب سے انڈین فلموں کی نمائش پر پابندی لگائی گئی، سینیما گھروں کی آمدنی تقریباً 60 فیصد گر گئی تھی۔ اگر پچھلے سال سے موازنہ کیا جائے تو مالکان کے اپنے مطابق سینیما گھروں میں آنے والوں کی تعداد میں نمایاں کمی واقع ہوئی اور تین مہینوں میں سینما ہالز کو تقریباً 60 کروڑ روپے کا نقصان ہوا تھا۔

اس کے علاوہ صنعتی ذرائع کے مطابق صرف نومبر میں 1700 لوگوں کی ملازمت ختم کردی گئی تھی اور 25 ہزار خاندان جن کا تعلق سینما گھروں کے بزنس سے تھا، اُن کی روزی روٹی خطرے میں پڑی ہوئی تھی۔ پاکستان میں کئی ایسے سینیما گھر پروجیکٹ جو زیرِتکمیل تھے، اُن پر کام روک دیا گیا تھا۔ کچھ ایسے بھی پروجیکٹ تھے جن کے سرمایہ کاروں نے اُن پر پیسے لگانے کا خیال ترک کردیا تھا۔

ظاہر ہے، جب دکھانے کے لیے نہ فلمیں ہوں اور نہ ہی لوگ سینیما گھروں کا رُخ کریں، تو پھر کوئی پاگل ہی ہوگا جو نئے سینما گھر بنانے پر اپنا سرمایہ لگائے گا۔

لیکن یہ صرف سینما گھروں یا اُن کے سرمایہ کاروں کا مسئلہ نہیں ہے۔ سینما گھروں میں فلم بینوں کی گھٹتی تعداد کا اثر اُن چند پاکستانی فلموں پر بھی پڑا ہے جو پچھلے تین مہینوں میں ریلیز ہوئی ہیں۔ اُن سب کا باکس آفس کا بزنس توقعات سے کم رہا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP/Getty Images
Image caption رواں ماہ عامر خان کی فلم دنگل ریلیز ہونے والی ہے جس سے پاکستانی سینیما گھروں کو خاصی آمدنی کی توقعات ہیں

دلچسپ بات یہ ہے کہ انڈین فلموں پر پابندی سے پہلے پاکستانی فلمساز عموماً اس بات کا رونا روتے تھے کہ بالی وُڈ فلموں کی وجہ سے اُن کو اُتنے سکرین نہیں مل پاتے جتنے اُن کو ملنے چاہیے تھے۔ لیکن جب کوئی مقابلہ باقی نہیں رہا تو یہ رونا تھا کہ اُن کی فلموں کو بالی وُڈ کی فلموں کا ’اوورفلو‘ نہیں مل رہا تھا - یعنی وہ لوگ جن کو پہلے انڈین فلم کا ٹکٹ نہیں ملتا تھا وہ عموماً کسی پاکستانی فلم کا ٹکٹ لے لیتے تھے، لیکن اب وہ لوگ سینیما آنے سے ہی گریز کر رہے تھے۔

پاکستان میں اور خاص کر سوشل میڈیا پر ہر طرح کے 'فوری ایکسپرٹ' مل جاتے ہیں، ایسے لوگ جنھیں نہ فلمی صنعت کی شد بد ہے نہ معاشیات کی، اُن سے اکثر سننے کو ملتا تھا کہ یہ ایک بڑا سنہری موقع ہے پاکستانی فلموں کے لیے اگر وہ اپنی کوالٹی بہتر بنالیں۔ یہ بات اُن کی سمجھ سے بالاتر تھی کہ فلموں کا معیار بہتر بنانے کے لیے پیسوں کی ضرورت ہوتی ہے اور جب باکس آفس نہیں چلتا تو نہ فلموں میں سرمایہ کاری ہوتی ہے نہ نئے سینیما گھر بنتے ہیں جن کی پاکستان اور پاکستانی فلموں کو اشد ضرورت ہے۔

نئے سینما گھر چھوڑیے، جو تھوڑے بہت سینما اس وقت موجود ہیں، وہ بھی بند ہو جاتے اگر یہی معاملات کچھ دن اور چلتے رہتے۔ اس کا براہِ راست اثر آگے بننے والی فلموں پر پڑتا اور جلد ہی وہی حالات واپس آجاتے جو کچھ عرصہ پہلے تھے، یعنی پاکستانی فلمیں بننا بند ہو جاتیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption اگلے ماہ جنوری میں شاہ رخ خان کی فلم رئیس ریلیز ہو رہی ہے

بات شروع ہوئی تھی سینما مالکان سے۔ جب تین مہینے پہلے انھوں نے انڈین فلموں پر پابندی کا قدم اٹھایا تھا، میں نے اور کچھ دیگر لوگوں نے اس کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا تھا کیونکہ ہماری نظر میں یہ ایک بہت ہی خطرناک قدم تھا جس کے منفی نتائج صاف نظر آرہے تھے۔

ہمیں ڈر تھا کہ یہ فیصلہ جلدبازی میں کیا گیا ہے اور حالات قابو سے باہر ہونے کے قوی امکان تھے۔ افسوس کہ بالکل ایسا ہی ہوا۔ حالات سینما مالکان کے کنٹرول سے باہر ہو گۓ اور جو پابندی وہ اپنی طرف سے صرف چند دن کے لیے، علامتی طور پر لگانا چاہتے تھے، وہ مہینوں تک کھنچ گئی۔ جس نے اُن کا اور پوری صنعت کا بھٹہ تقریباً بیٹھا دیا اور آخر میں اُن کی حب الوطنی کی بڑکیں بھی غائب ہو گئیں اور انھیں اپنا سا مُنہ لے کر پابندی کو ختم کرنا پڑا ہے۔

اس وقت اس فیصلے کی واپسی کے محرکات یہ بھی ہیں کہ آگے دو بڑی انڈین فلمیں آرہی ہیں، ایک عامر خان کی 'دنگل' جو 22 دسمبر کو ریلیز ہو رہی ہے اور دوسری شاہ رُخ خان کی 'رئیس' جو 25 جنوری کو نمائش کے لیے پیش کی جائے گی اور جس میں پاکستانی اداکارہ ماہرہ خان بھی ہیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption انڈیا میں بہت سے پاکستانی اداکاروں کو مقبولیت حاصل ہے جن میں سے فواد خان ایک ہیں

فلمی حلقوں کا خیال ہے کہ اگر یہ دونوں فلمیں بھی پاکستانی سینماؤں میں نہ لگیں تو پھرملکی صنعت کو بہت بڑا دھچکہ لگے گا اور سینما مالکان 2017 کو بھی خیرباد کہنے پر مجبور ہو جائیں گے۔

یہاں چند باتیں تو واضح ہیں۔ ایک تو یہ کہ دنیا کے اس نئے نظام میں جس میں ہر چیز آپ کو با آسانی انٹرنیٹ پر دستیاب ہے، کسی چیز کو ’بین‘ کرنا نہ صرف ناممکن ہے بلکہ ایسی امید کرنا انتہائی درجہ کی بیوقوفی ہے۔ دوسری یہ کہ پاکستان کے عوام انٹرٹینمنٹ میں حب الوطنی کو ملحوظِ خاطر نہیں رکھتے۔ انھیں معیار کی فلمیں دیکھنے سے غرض ہے (اور شاید اس سے بھی زیادہ 'چوائس' کے حق سے غرض ہے) اور اگر وہ انڈین فلمیں ہیں، تو بھی انھیں کوئی اعتراض نہیں۔

اگر اس بیوقوفانہ تجربے کا کوئی مثبت پہلو ڈھونڈا جا سکتا ہے تو وہ یہ ہے کہ شاید آئندہ سینما مالکان چھلانگ لگانے سے پہلے دوبار سوچیں گے!

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں