جین ژینگ چین کی پہلی بین اقوامی پاپ سٹار بن سکیں گی؟

جین ژینگ تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption جین ژینگ کی تازہ ترین 'ڈسٹ مائی شولڈرز آف' نامی میوزک ویڈیو شاید انھیں بین القوامی شہرت کے دروازے کے قریب لے جانے میں مدد فراہم کرے

جین ژینگ کا شمار چین کے میگا پاپ سٹار میں ہوتا ہے تاہم ان کا تازہ ترین گانا انھیں اپنے ملک کی پہلی بین الاقوامی سپر سٹار بنانے میں مدد فراہم کر سکتا ہے۔

سنہ 2015 میں جین ژینگ کا نام اس وقت مشہور ہوا جب وہ چین کے ٹی وی پر سپر گرل کے نام سے پیش کیے جانے والے گانے کے مقابلے میں دوسرے رنر اپ پر آئیں۔

شمالی کوریا کا میوزک بینڈ چین سے اچانک واپس چلا گیا

شمالی کورین بینڈ چین میں فن کا جادو جگانے کے لیے تیار

انھوں نے اپنی متاثر کن آواز کے ذریعے سب کو متاثر کیا اور یہاں تک کہ انھیں اس مقابلے میں 'ڈالفن پرنسس' کا لقب دیا گیا۔

اگرچہ جین ژینگ ابھی تک بین القوامی سطح پر اپنا اثر قائم کرنے میں ناکام رہی ہیں تاہم وہ باقاعدہ طور پر انگریزی زبان کے گانوں پر پرفارم کرتی رہتی ہیں یہاں تک کہ ایک بار جب انھیں امریکہ ٹی وی پر دکھائے جانے والے معروف 'اوپرا ونفری شو' میں مہمان کے طور پر مدعو کیا گیا تو انھوں نے وہاں پر پرفام کیا۔

ٹیمبالینڈ کی جانب سے پیش کی جانے والی جین ژینگ کی تازہ ترین 'ڈسٹ مائی شولڈرز آف' نامی میوزک ویڈیو شاید انھیں بین القوامی شہرت کے دروازے کے قریب لے جانے میں مدد فراہم کرے۔

اس میوزک ویڈیو کی کامیابی جین ژینگ کے لیے اہم ہو گی کیونکہ یہ ان کے انگریزی زبان کے البم کا پہلا گانا ہو گا جسے آئندہ برس اپریل میں ریلیز کیا جائے گا۔

اس گانے کو یو ٹیوب پر اب تک 58 لاکھ بار دیکھا جا چکا ہے ، یہ کسی بھی چینی آرٹسٹ کا پہلا گانا تھا جو آئی ٹیون چارٹ پر پہلے پانچ نمبروں تک پہنچا ہے۔

جین ژینگ نے بی بی سی کو بتایا 'میں ایک چینی گلوکارہ ہوں تاہم یہ گانا انگریزی سامعین کے لیے ہے۔ اس ویڈیو کے ذریعے مختلف ثقافت کے حامل افراد کو سمجھنے کی ضرورت ہے۔'

انھوں نے مذید بتایا کہ انھوں نے اور پروڈکشن ہاؤس نے اس ویڈیو کو شوٹ کرنے کے لیے 48 گھنٹوں تک مسلسل کام کیا جو کہ آرام دہ تجربہ نہیں تھا۔

جین ژینگ کے مطابق 'اس ویڈیو کی پروڈکشن کے دوران مجھے بار بار پینٹ کیا گیا جس سے میک اپ کو ختم کرنا بہت تکلیف دہ تھا، دوسری شوٹنگ ختم ہونے کے بعد میرا چہرہ سوج گیا تھا۔'

جین ژینگ کا یہ طرزِ عمل ایک زیادہ بہتر نقطۂ نظر کی نمائندگی کرتا ہے، لیکن کیا مغربی موسیقی کی صنعت ایک چینی پیش رفت کے لیے ماحول تیار ہے

میوزک انڈسٹری سے وابستہ ایک کمپنی مڈیا کے تجزیہ کار مارک مولیگن کا کہنا ہے کہ بین القوامی فنکاروں کے لیے عالمی سطح پر اثر بنانا تاریخی طور پر واقعی مشکل ہے۔

اسی بارے میں