اوم پوری کی پر اسرار موت؟

اوم پوری تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اوم پوری کا شمار انڈیا کے معروف فنکاروں میں ہوتا تھا

انڈیا کے معروف اداکار اوم پوری کی آخری رسومات اد کر دی گئیں لیکن ان کی موت کے بارے میں شبہ ظاہر کیا جا رہا ہے کہ آیا وہ قدرتی تھی، حادثہ یا کچھ اور؟

ممبئی میں ورسووا پولیس ان کی موت کے معاملے کی تحقیقات کر رہی ہے۔

معروف انڈین اداکار اوم پوری چل بسے

اداکار اوم پوری کی آخری شام کیسے گزری؟

پولیس کے مطابق اس تفتیش کا مقصد یہ معلوم کرنا ہے کہ اوم پوری کی موت کا سبب کچھ اور تو نہیں۔

ابھی تک پوسٹ مارٹم اور میڈیکل رپورٹ بھی عوام کے سامنے پیش نہیں کی گئی ہے۔

66 سالہ اوم پوری جمعے کو اپنے گھر میں مردہ پائے گئے تھے۔ ان کے سر پر چوٹ کے نشان تھے۔

ان کی موت پر شبہ متضاد بیانات کے سبب پیدا ہوا۔ پڑوسیوں کے مطابق وہ بیڈروم سے ملحق کچن میں گرے ہوئے پائے گئے تھے جب کہ ان کے نوکروں نے پولیس کو بتایا تھا کہ اوم پوری بستر کے پاس گرے ہوئے ملے تھے۔

تاہم پولیس نے جو اے ڈی آر (ایكسیڈینٹل ڈیتھ رپورٹ) داخل کی ہے وہ ایف آئی آر نہیں ہے اور اس میں کسی کو نامزد نہیں کیا گیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اداکار اوم پوری نے اپنے فلمی کریئر کا آغاز مراٹھی فلم 'گھاسی رام کوتوال' سے کی تھی جو سنہ 1976 میں ریلیز ہوئی تھی

ورسووا پولیس نے بی بی سی کو بتایا: اگر کوئی مشتبہ بات سامنے آتی ہے یا پھر خاندان کا کوئی رکن شکایت کرتا ہے کہ اوم پوری کی موت ہارٹ اٹیک سے نہیں ہوئی ہے بلکہ انھیں مارا گیا ہے تو اس اے ڈی آر کو ایف آئی آر میں تبدیل کر کے تفتیش کا رخ بدل جائے گا۔

پولیس نے یہ بھی بتایا کہ اس اے ڈی آر کے نتائج چند روز بعد پیش کیے جائیں گے اور اگر تحقیقات میں کچھ نہیں نکلا تو اسے قدرتی موت تسلیم کر لیا جائے گا۔

اوم پوری نے آکروش، اردھ ستیہ، گپت، جانے بھی دو یارو، چاچی 420، مالا مال ویکلی میں یادگار اداکاری کی ہے۔ وہ فلم 'گھایل ریٹرنز' میں آخری بار بڑے پردے پر نظر آئے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption اوم پوری کی موت پر بالی وڈ سوگوار ہے

انھوں نے اپنے فلمی کریئر کا آغاز مراٹھی فلم 'گھاسی رام کوتوال' سے کی تھی جو سنہ 1976 میں ریلیز ہوئی تھی۔

اوم پوری بالی وڈ کی ہرفن مولا شخصیت کے طور پر معروف تھے۔ کئی فلموں میں ان کی بہترین اداکاری کے لیے انھیں ایوارڈ سے نوازا گيا۔

انھوں نے 'فلم اینڈ ٹیلی ویژن انسٹی ٹیوٹ آف انڈیا' سے تعلیم حاصل کی تھی۔ اس سے قبل دہلی کے 'نیشنل سکول آف ڈراما' سے بھی انھوں نے تربیت لی تھی جہاں پر معروف اداکار نصیرالدین شاہ ان کے ساتھی طلبا میں سے ایک تھے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں