میں سو فیصد صرف ایک فنکار ہوں: نواز الدین صدیقی

نوازالدین صدیقی تصویر کے کاپی رائٹ Twitter
Image caption ٹوئٹر پر نوازالدین صدیقی کے ایک پیغام کو سراہا جا رہا ہے

انڈیا میں مسلمانوں کے خلاف بڑھتی ہوئی نفرت اور بعض سخت گیر ہندو تنظیموں کی جارحانہ مہم کے دوران بالی وڈ کے معروف اداکار نوازالدین صدیقی نے سوشل میدیا پر ایک ٹوئٹر کے ذریعے مذہبی ہم آہنگی کا ایک پیغام دیا ہے جس میں انھوں نے کہا ہے کہ وہ صرف اور صرف ایک فنکار ہیں۔

نامہ نگار شکیل اختر کے مطابق ایک ویڈیو پیغام میں نوازالدین یکے بعد دیگرے کئی پلے کارڈز لیے ہوئے دکھائی دیتے ہیں جس میں سے ایک میں لکھا ہوا ہے: 'ہائے میں نوازالدین صدیقی ہوں۔' پھر دوسرے میں لکھا ہے 'جب میں نے اپنا ڈی این اے ٹیسٹ کرایا تو میں نے پایا۔'

٭ شیو سینا کا اعتراض، نوازالدین کو اداکاری سے روک دیا گيا

اور پھر وہ ایک ہندو کی شکل میں دکھائی دیتے ہیں اور ان کے ہاتھ میں جو پلے کارڈ ہے اس پر لکھا ہے 'میں 16.66 فیصد ہندو ہوں۔'

اسی طرح ایک دوسری تصویر میں وہ مسلم کے طورپر سامنے آتے ہیں اور اس پر لکھا ہے کہ 'میں 16.66 فیصد مسلم ہوں۔'

اسی طرح نوازالدین سکھ، عیسائی اور بودھ مذہب کے بھیس میں 16.66 فیصد کا پلے کارڈ لیے نظر آتے ہیں۔

اس کے ساتھ ایک پلے کارڈ میں لکھا ہے کہ دنیا کے بچے ہوئے تمام مذاہب کا ان میں 16.66 فی صد حصہ ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter
Image caption انھوں نے ہر مذہب کا ڈی این اے 66۔16 فی صد دیا ہے

آخر میں پلے کارڈ پر لکھا ہو ہے: 'میں نے جب اپنی روح سے سوال کیا تو مجھے پتہ چلا کہ ۔۔۔ میں صد فی صد صرف فنکار ہوں۔'

یہ پیغام انھوں نے ایک ایسے وقت میں دیا ہے جب ہندوؤں اور مسلمانوں کے درمیان تعلقات تلخ ہو رہے ہیں اور ہندو گئو رکشک ملک میں جگہ جگہ مویشیوں کے مسلم تاجروں، ٹرانسپورٹروں اور مویشی مالکوں پر حملے کر رہے ہیں۔

کجھ عرصے پہلے نواز ہندوؤں کے ایک تہوار کے دوران روایتی رام لیلا میں سٹیج پر رامائن کے ایک کرار کو ادا کرنے والے تھے لیکن انھیں بعض ہندو تنظیموں نے یہ کردار ادا کرنے سے یہ کہہ کر روک دیا تھا کہ یہ کردار مسلمان نہیں ادا کر سکتے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter
Image caption انھوں نے اپنے پیغام میں خود کی صد فی صد آرٹسٹ قرار دیا ہے

اسی بارے میں