عید الاضحٰی پر کوئی اردو فلم نہیں

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption دانے پے دانہ صرف چھبیس دنوں میں تیار کی گئی ہے

پاکستان میں عید کا تہوار مقامی فلمسازوں اور سینما مالکان کے لیے کاروباری اعتبارسے خاصا منافع بخش ہوتا ہے لیکن اس برس عید الاضحیْ کے موقع پر صرف دو پاکستانی فلمیں ہی نمائش کے لیے پیش کی گئیں۔ ان فلموں میں اردو زبان کی کوئی فلم شامل نہیں ہے۔

اس عید پر نمائش کے لیے پیش کی جانے والی دو نئی فلمیں ’دانے پے دانہ ‘ اور ’ٹھاکر چار سو بیس‘ پنجابی زبان میں ہیں اور ان میں سے ایک فلم ’ دانے پے دانہ ‘ صرف چھبیس دنوں میں تیار کی گئی ہے۔

یہ تیسرا موقع ہے جب عید کے تہوار پر پاکستانی سینما گھروں میں قومی زبان یعنی اردو میں بننے والی کوئی فلم نمائش کے لیے پیش نہیں کی گئی۔ اس سے پہلے گزشتہ برس عیدالفطر اور عید الاضحیْ پر مجموعی طور پر سات فلمیں پیش کی گئی تھیں اور ان میں کوئی بھی فلم اردو زبان میں نہیں تھی۔

عید پر پیش کی جانے والی دونوں پنجابی فلمیں ’دانے پے دانہ‘ اور ’ٹھاکر چار سو بیس‘ روایتی فارمولا فملیں ہیں جو صرف چند ہفتوں میں تیار کی گئی ہیں۔

ان دونوں فلموں میں معمر رانا مرکزی کردار نبھا رہے ہیں۔ ’دانے پے دانہ‘ میں صائمہ اور ’ٹھاکر چار سو بیس‘ میں نرگس نے ہیروئن کا کردار ادا کیا ہے۔

ماضی کے معروف فلمی اداکار شاہد کی بھی ایک لمبے عرصے کے بعد فلموں میں واپسی ہوئی ہے اور وہ دانے پے دانہ میں ایک اہم کردار ادار کررہے ہیں جبکہ اداکارہ نرگس بھی ایک سال کے بعد کسی فلم میں جلوہ گر ہو رہی ہیں۔

دوسری جانب سینما مالکان نے عید کے موقع پر صرف دو پاکستانی فلموں کی نمائش کو قابلِ تشویش قرار دیا ہے۔

سینما مینجمینٹ ایسوسی کے چیئرمین قیصر نثار اللہ خان کے مطابق ڈیرھ سو کے قریب سینما گھروں کا پیٹ دو فلمیں کس طرح بھر سکیں گی۔

ان کے بقول اس عید پر ایک سو پچیس کے قریب سینما گھر ایسے ہیں جہاں نئی فلم نمائش کے لیے دستیاب نہیں ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ اگر بڑی تعداد میں فلمیں تیار ہوں گی تو سنیما گھروں کا کام چلے گا۔

سینما مینجمینٹ ایسوسی کے چیئرمین کے مطابق اردو زبان میں بننے والی فلم پر پچاس سے ستر لاکھ تک لاگت آتی ہے اسی لیے فلمساز کم لاگت میں علاقائی فلم بناتے ہیں کیونکہ اس طرح ان کا سرمایہ ڈوبتا نہیں ہے جبکہ علاقائی فلم کی جگہ اردو زبان میں بننے والی فلم اچھا بزنس نہیں کرتی۔

انہوں نے کہا کہ پاکستانی فلم ساز یہ سوچتے ہیں کہ بھارت کی بڑے بجٹ کی فلموں کی پاکستان میں نمائش جاری ہے اور اس کے مقابلے میں جو پاکستانی اردو فلم بنائی جائے گی وہ اس بجٹ اور معیار کی نہیں ہوگی جس سے وہ فلم فلاپ ہو جائے گی۔

پاکستان کے سنیما گھروں میں عید کے موقع پر کوئی بھارتی فلم نمائش کے لیے پیش نہیں کی گئی تھی تاہم بھارتی فلم’ را۔ ون‘ کی نمائش پہلے سے جاری ہے۔

اسی بارے میں