کیا ہالی وڈ کے جانور واقعی اداکاری کرتے ہیں؟

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ’دی آرٹسٹ‘ فلم کے اہم اداکار اوگی

فلموں کے ابتدا سے ہی جانوروں نے بڑی سکرین کا معرکہ کئی بار فتح کیا ہے لیکن کیا وہ واقعی اداکاری کرتے ہیں یا پھر یہ سب صرف بہترین تربیت کا کمال ہے؟

دو ہزار گیارہ کی فلم ’دی آرٹسٹ‘ سے امید کی جا رہی ہے کہ وہ اس سال آسکر انعامات میں کامیاب رہے گی لیکن اس فلم کے ایک انتہائی اہم کردار کو کوئی انعام نہیں ملنے لگا۔

نو سالہ ’اوگی‘ نامی یہ کتا جیک رسل ٹیریر نسل کا ہے۔ کانز فلم فسٹیول میں ’پام ڈوگ‘ کا انعام جیتنے والے اوگی نے اس فلم میں ایک گرتے فلمی ستارے کے وفادار ترین دوست کا کردار ادا کیا ہے۔ اوگی کے مداحوں نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر اور فیس بک پر ایک مہم کا آغاز کیا ہے جس کا مطالبہ ہے کہ اوگی کی خدمات کو پہچانا جائے۔ بہت سے تجزیہ کاروں کا بھی کہنا ہے کہ اوگی نے ’دی آرٹسٹ‘ میں میدان مار لیا ہے۔

آسکر اکیڈمی جانوروں کی خدمات کو نظر انداز کرنے کے لیے معروف ہے۔ کہا جاتا ہے کہ انیس سو انتیس میں جرمن شیپرڈ رن ٹن ٹن نے بہترین اداکار کا انعام جیت لیا تھا مگر یہ انعام اداکار ایمل جننگز کو دے دیا گیا تھا۔ کچھ لوگوں کا کہنا ہے کہ آج کی آسکر اکیڈمی بھی اتنی ہی تنگ نظر ہے۔

رن ٹن ٹن کے لیے بعدِ وفات آسکر انعام کی مہم چلانے والی سوزن اورنیل کا کہنا تھا ’اس بات کا شدید امکان ہے کہ کچھ اداکار ایک جانور کے ساتھ جس نے کسی فلم کو انتہائی مقبول بنا دیا ہو، سٹیج پر مدِ مقابل ہونے کا بہت برا منائیں گے۔‘

ان کا کہنا تھا کہ رن ٹن ٹن خاموش فلموں کا ایک بلا حجت ستارہ تھا اور وہ ایک بہترین اداکار ہونے کا دعویٰ بھی کر سکتا تھا چاہے انیس سو انتیس میں اکیڈمی نے بے ایمانی بھی کی ہو۔

اسی بارے میں