کیسی ہے فلم ہیروئن؟

آخری وقت اشاعت:  جمعـء 21 ستمبر 2012 ,‭ 08:25 GMT 13:25 PST
ہیروئن میں کرینہ

بالی وڈ کی مشہور اداکارہ کرینہ کپور کی فلم ’ہیروئن‘ آج جمعہ کو ریلیز ہو رہی ہے۔ واضح رہے کہ کرینہ کپور نے اپنی اس فلم اپنی اب تک کی بہترین فلم کہا ہے اور آج کرینہ کپور کا یوم پیدائش بھی ہے۔

فلم کے تبصرہ نگار ارنب بنرجی کہ کہنا ہے کہ مدھر بھنڈارکر اپنی فلموں کے سکرین پلے کے خاص انداز کے لیے جانے جاتے ہیں۔

فلم ’چاندنی بار‘ (ایک ڈانس بار لڑکی کی کی کہانی ہے) سے لے کر ’ہیروئین‘ تک انہوں نے اپنی فلم کے اہم کرداروں کے درمیان متنازع اور پیچیدہ رشتوں کو پردے پر اتارنے کی کامیاب کوشش کی ہے۔

’پیج تھری‘، ’کارپوریٹ‘ اور ’فیشن‘ جیسی فلموں کی کامیابی کے بعد وہ فلم ’ہیروئن‘ لے کر آئے ہیں جس میں ایک پرعزم بالی وڈ ہیروئن کے فلمی سفر کی کہانی بیان کی گئی ہے۔ ’ہیروئن‘ ایک ایسی اداکارہ کی کہانی ہے جو لالچ، مفاد اور اپنے حریف سے آگے نکلنے کی اندھی دوڑ میں اپنے آپ کو برباد کر دیتی ہے۔

اداکاری

"کرینہ کپور نے اپنے رول کو ادا کرنے کے لیے کافی محنت کی ہے، لیکن مسئلہ یہ ہے کہ وہ کچھ مناظر میں یہ کوشش کرتی ہوئی نظر آ جاتی ہیں. تاہم فلم کے باقی سینز میں انہوں نے مضبوطی سے اپنے کردار کو نبھایا ہے"

ارنب بنرجی

ارنب بنرجی کا کہنا ہے کہ ہیروئین کی کہانی کے ساتھ مسئلہ یہ ہے کہ آسانی کے ساتھ اس کی پیش گوئی کی جا سکتی ہے کہ آگے کیا ہونے والا ہے۔

انھوں نے لکھا ہے کہ ’اگر آپ اس فلم کو فلمی دنیا کی حقیقت جاننے کی غرض سے دیکھنے جائیں گے تو آپ بری طرح سے مایوس ہوں گے‘۔

ان کے مطابق بھنڈارکر، شروعات میں ہی فلم کا پلاٹ کھو دیتے ہیں اور جس فلم انڈسٹری کا وہ خود ہی حصہ ہیں اسی انڈسٹری کی کہانی انہوں نے بہت ہی سطحی طریقے بیان کی ہے۔

کہانی ایک سپر سٹار ماہی اروڑا (کرینہ کپور) کی ہے جنہوں نے یکے بعد دیگرے کئی ہٹ فلمیں دی ہیں، لیکن تمام کامیابیوں کے بعد بھی وہ خود کو تنہا محسوس کرتی ہیں۔

وہ اپنی ہی سٹارڈم کی غلام بن جاتی ہیں، پھر نئی ہیروئنوں کے آنے کے بعد ان کی کامیابی میں جیسے گہن سا لگ جاتا ہے وہ ایک ہٹ فلم کے لیے ترس جاتی ہیں۔

ماہی طرح طرح کے ہتھکنڈے اپناكر اپنی حریف ہیروئنوں سے آگے نکلنے کی کوشش کرتی ہیں۔

وہ اپنے ساتھی اداکار آرين کھنہ (ارجن رامپال) سے بے حد محبت بھی کرتی ہیں جو پہلے سے ہی شادی شدہ ہیں۔ ایک طرف تو ماہی آرين کے لیے کچھ بھی کرنے کو تیار ہیں تو دوسری طرف آرين انتہائی معقولیت پسند انسان ہیں اور ان کے لیے انسان کا کردار ہی سب کچھ ہے۔ ان سب وجوہات کے سبب ماہی کی زندگی میں یکے بعد ديگرے مشکلات پیش آنے لگتی ہیں۔

ماہی کے پاس فلموں کا قحط پڑنے لگتا ہے وہ فلم سازوں کے گھر جا کر ان سے فلمز دینے کی گزارش کرنے لگتی ہیں، ذہنی دباؤ کی وجہ سے ان کا کیریئر تباہ ہونے لگتا ہے لیکن تمام تر تنازعات میں رہنے کی وجہ سے وہ خبروں میں ضرور رہتی ہیں۔

مدھور بھنڈارکر اور کرینہ کپور

مدھور بھنڈارکر اور کرینہ کپور نے فلم کی کامیابی کے لیے دعائیں بھی کی ہیں۔

ذاتی زندگی میں بھی ان کے ہاتھ مایوسی ہی لگتی ہے۔

فلم مبصر ارنب کا کہنا ہے کہ ’ہیروئین کے ساتھ سب سے بڑی پریشانی یہ ہے کہ یہ فلمی دنیا کے صرف ’غیر اخلاقی‘ پہلو کو بہت ہی سطحی طریقے سے دکھانے کی کوشش کرتی ہے‘۔

بہرحال کرینہ کپور نے اپنے رول کو ادا کرنے کے لیے کافی محنت کی ہے، لیکن مسئلہ یہ ہے کہ وہ کچھ مناظر میں یہ کوشش کرتی ہوئی نظر آ جاتی ہیں۔ تاہم فلم کے باقی سینز میں انہوں نے مضبوطی سے اپنے کردار کو نبھایا ہے۔

اس کے باوجود ارنب کا کہنا ہے کہ 'اس قسم کی فلم میں جس گہرائی کی ضرورت ہونی چاہئے وہ گہرائی کرینہ نہیں لا پائی ہیں۔ ان کے بالمقابل دويا دتہ (جنہوں نے کرینہ کی پی آر منیجر کا کردار ادا کیا ہے) اور شاہنا گوسوامی (فلم میں بنگالی اداکارہ پروتما کا کردار ادا کیا ہے) ہیں وہ دونوں کرینہ سے کہیں زیادہ مضبوط نظر آئی ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔