نایاب فارسی قالین ریکارڈ قیمت پر فروخت

Image caption نیلام گھر کا اندازہ تھا کہ یہ قالین تقریباً نوے لاکھ ڈالر تک فروخت ہو گا

فارس میں سترہویں صدی میں تیار کردہ ایک قالین تین کروڑ اڑتیس لاکھ ڈالر کی ریکارڈ قیمت پر فروخت ہوا ہے۔

نیویارک کے نیلام گھر سوتھبیز میں اس قالین کو ایک نامعلوم گاہک نے خریدا ہے۔

اس قالین کی قیمت اس سے پہلے فروخت ہونے والے کسی بھی ایرانی قالین سے تین گنا زیادہ ہے۔

یہ قالین امریکی صعنت کار اور سینیٹر ولیم کلارک کی ملکیت تھا جنہوں نے وصیت کے ذیعے انیس سو چھبیس میں قالین سمیت دیگر نایاب اشیا کو کو کرین آرٹ گیلری کو عطیہ کر دیا تھا۔

اس سے پہلے سال دو ہزار دس میں لندن کے کرسٹی نیلام گھر میں ایک فارسی قالین چھیانوے لاکھ ڈالر کی ریکارڈ قیمت پر فروخت ہوا تھا۔

سوتھبیز نیلام گھر نے اندازہ لگایا تھا کہ یہ قالین تقریباً نوے لاکھ ڈالر تک فروخت ہو گا تاہم نیلامی میں بولی دینے والے چار افراد نے دس بار اس قالین کی قیمت لگائی اور آخر میں ٹیلی فون کے ذریعے سب سے زیادہ قیمت لگائی گئی۔

کوکرین آرٹ گیلری کے ڈائریکٹر کی جانب سے جاری ہونے والے ایک بیان کے مطابق نیلامی کے نتائج شاندار ہیں۔

آرٹ گیلری نے اس قالین اور دیگر نادر اشیاء کو گودام میں رکھا ہوا تھا۔

یہ قالین سترہویں صدی میں تیار کیا گیا تھا اور خیال کیا جا رہا ہے کہ اسے جنوب مشرقی ایران کے علاقے کرمان میں تیار کیا گیا۔

اس قالین کو آخری بار سال دو ہزار آٹھ میں کوکرین آرٹ گیلری نے نمائش کے لیے پیش کیا تھا۔

اسی بارے میں