’تلنگانہ کے بعد ممبئی کیوں نہیں؟‘

Image caption شوبھا کی ٹویٹ کے بعد کئی سیاسی جماعتوں نے شوبھا ڈے کو آڑے ہاتھوں لیا اور ان کی کڑی تنقید کی

بھارت میں تلنگانہ کو الگ ریاست بنانے کی تجویز کی منظوری کے بعد مشہور مصنفہ شوبھا ڈے کے ٹویٹ نے ہلچل مچا دی ہے۔

شوبھا ڈے نے اپنے ٹویٹ میں لکھا ہے ’مہاراشٹر اور ممبئی؟؟؟ کیوں نہیں؟ ممبئی نے ہمیشہ سے ایک الگ وجود کی خواہش کی ہے۔ اس کھیل میں ان گنت امکانات ہیں۔‘

اس ٹویٹ کے بعد کئی سیاسی جماعتوں نے شوبھا ڈے کو آڑے ہاتھوں لیا اور ان کی کڑی تنقید کی۔

لیکن مہاراشٹر نو نرمان سینا (ایم این ایس) کے سربراہ راج ٹھاکرے نے شوبھا ڈے پر ذاتی تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ الگ ریاست طلاق لینے جتنا آسان نہیں ہے اور شوبھا ڈے اسے سمجھیں گی۔

شیوسینا کے رہنما سنجے راوت نے مہاراشٹر حکومت سے شوبھا ڈے کے خلاف کارروائی کرنے کی اپیل کی ہے۔

دوسری طرف بھارتیہ جنتا پارٹی نے کہا ہے کہ شوبھا ڈے کو یہ نہیں بھولنا چاہیے کہ ممبئی کو مہاراشٹر میں ملانے کے لیے 105 لوگوں نے اپنی جان دی تھی۔

بی جے پی لیڈر ونود تاوڑے نے مصنفہ سے اپیل کی ہے کہ وہ اپنا ٹویٹ واپس لیں۔ نیشنلسٹ کانگریس پارٹی نے بھی تنقید کی ہے اور کہا ہے کہ ممبئی مہاراشٹر کا دارالحکومت ہے۔

این سی پی کے نواب ملک نے کہا کہ جو لوگ ممبئی کو الگ کرنے کی بات کر رہے ہیں، ان کو اس شہر کی تاریخ کے بارے میں معلومات نہیں اور وہ لوگوں کے جذبات کو ٹھیس پہنچا رہے ہیں۔

دوسری طرف شوبھا ڈے کا کہنا ہے کہ انہوں نے طنز میں یہ لکھا تھا اور وہ کوئی وجہ نہیں دیکھتیں کہ انہیں اس پر معافی مانگنی چاہیے۔