مائیکل ڈگلس اور زیٹا جونز میں ’علیحدگی‘

Image caption مائیکل ڈگلس اور کیتھرین زیٹا جونز نے 2000 میں فرانس میں شادی کی تھی

ہالی وڈ کے مشہور فلمی جوڑے مائیکل ڈگلس اور اداکارہ کیتھرین زیٹا جونز نے تصدیق کی ہے کہ وہ ’تیرہ سال کی شادی کے بعد اب علیحدہ ہو رہے ہیں‘۔

اداکاروں کے ترجمان نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ انہوں نے یہ فیصلہ ’اپنی شادی سے متعلق معاملات کو درست کرنے‘ کے لیے کیا ہے۔

اڑسٹھ سالہ ڈگلس اور سوانزی میں پیدا ہونے والی تریالیس سالہ زیٹا جونز نے 2000 میں فرانس میں شادی کی تھی۔

دونوں اداکاروں کے اس شادی سے دو بچے ہیں تیرہ سالہ ڈیلن اور دس سالہ کیرس۔

دونوں اداکاروں کو حالیہ دنوں میں صحت کی خرابی کا سامنا رہا ہے۔

ڈگلس کو دو ہزار دس میں گلے کا کینسر ہوا تھا جبکہ زیٹا جونز کو بائپولر ڈس آرڈر کا علاج 2011 گیارہ اور اس سال بھی کروانا پڑا تھا۔

اس سال کے کان فلم فیسٹیول میں ڈگلس نے کہا تھا کہ ان کا کینسر اورل سیکس کی وجہ سے ہوا۔

کیتھرین اور مائیکل کی سالگرہ ایک ہی دن یعنی پچیس ستمبر کو ہے جو 1998 میں فرانس میں منعقد ہونے والے ڈوویل فلم فیسٹیول میں ملے تھے۔

ان کا پہلا بچہ اگست 2000 میں پیدا ہوا جس کے تین ماہ بعد انہوں نے نیویارک کے پلازہ ہوٹل میں شادی کر لی۔

اس پر تعیش شادی کی تقریب میں ہالی وڈ کے بڑے فلمی ستاروں گولڈی ہان، کرسٹوفر ریو، جیک نکلسن اور بریڈ پٹ نے شرکت کی۔

اس شادی کی خصوصی تصاویر کے لیے جریدے ’اوکے‘ نے جوڑے کو دس لاکھ پاؤنڈ ادا کرنے کا معاہدہ کیا مگر ’اوکے‘ کے مخلاف جریدے ’ہیلو‘ نے اس خصوصی تصاویر کی کہانی کو چوپٹ کر دیا۔

’ہیلو‘ جریدے نے ایک شخص کو اس تقریب میں مہمان یا بیرا بنا کر بھیجا جس نے تصاویر کھینچ کر جریدے کو دیں جس نے ان کو شائع کیا۔

اس کے نتیجے میں برطانیہ میں ایک لمبی قانونی جنگ کا آغاز ہوا جس میں کیتھرین اور مائیکل کا موقف تھا کہ ’ہیلو‘ جریدے نے ان کی پرائیویسی میں مداخلت کی ہے۔

یہ کیس 2007 میں حل ہوا جب برطانوی دارلامراء نے فیصلے کیا کہ جریدے ’ہیلو‘ نے جریدے ’اوکے‘ کے رازداری میں خلل ڈالا ہے۔

اس شادی سے قبل اس جوڑے نے شادی سے متعلق ایک معاہدے پر دستخط کیے تھے جس کے نتیجے میں کیتھرین زیٹا جونز کو شادی ختم ہونے کی صورت میں ہر سال کے عوض دس لاکھ پاؤنڈ ملیں گے۔

مائیکل ڈگلس نے اس معاہدے کے لیے اصرار کیا تھا کیونکہ انہیں اپنی پہلی بیوی کو طلاق کے نتیجے میں چار کروڑ چالیس لاکھ پاؤنڈ ادا کرنے پڑے تھے۔