والد پٹائی نہ کرتے تو سیکس ورکر بن گیا ہوتا: روی کشن

Image caption روی کشن اپنی علاقائی زبان کی فلموں میں اتنے ہی مقبول ہیں جتنے امیتابھ بچن ہندی فلموں میں

بھارتی کی علاقائی زبان بھوجپوری کی فلموں کے ’امیتابھ بچن‘ کہلائے جانے اداکار روی کشن نے کا کہنا ہے کہ اگر انہوں نے مار نہ کھائی ہوتی تو وہ ’سیکس ورکر‘ بھی بن سکتے تھے۔

ایک اخبار کو دیے گئے انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ اگر ان کے والد نے انہیں بچپن میں مارا پیٹا نہ ہوتا تو شاید وہ ’مرد سیکس ورکر‘ بن سکتے تھے۔

اس کی وجہ بتاتے ہوئے روی کشن کا کہنا تھا میرے والد کا ڈیري کا کاروبار تھا جو کسی وجہ سے بند ہو گیا۔ میرے والد چاہتے تھے کہ میں اسے دوبارہ شروع کروں۔‘

’ وہ مجھے مارتے تھے، لیکن یہ بات سچ ہے کہ اگر انہوں نے ایسا نہیں کیا ہوتا تو میں چرسي اور لونڈے باز بن گیا ہوتا۔‘

روی کشن نے بتایا کہ ان کے والد انہیں مشورہ دیا کرتے، ’اپنی توانائی کے اچھے اعمال کے لیے بچا کر رکھو۔ لڑکیوں کے پیچھے مت چلنا۔ ہمیشہ ایک ہی عورت کے بن کر رہو۔ سیکس ورکر مت بن جانا۔‘

روی کشن نے بتایا کہ اگرچہ ان کے والد نہیں چاہتے تھے کہ وہ فلموں میں آئیں لیکن ان کی نصیحتوں کی وجہ سے ہی وہ اپنی زندگی میں سنبھل سکے۔

اسی بارے میں