معروف مصنف گیبریئل گارسیا مارکیز انتقال کر گئے

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption گیبریئل مارکیز ہسپانوی زبان کے بہترین مصنفوں میں سے ایک مانے جاتے ہیں

کولمبیا سے تعلق رکھنے والے نوبیل انعام یافتہ مصنف گیبریئل گارسیا مارکیز کے خاندان والوں کا کہنا ہے کہ وہ 87 سال کی عمر میں وفات پا گئے ہیں۔

گیبریئل مارکیز ہسپانوی زبان کے بہترین مصنفوں میں سے ایک تھے اور ان کا ناول ’ون ہنڈرڈ یئرز آف سولی ٹیوڈ‘ (تنہائی کے سو سال) دنیا بھر میں بہت معروف ہے۔

1967 میں شائع ہونے والے اس ناول کی تین کروڑ جلدیں فروخت ہو چکی ہیں۔ مارکیز کو 1982 میں ادب کا نوبیل انعام دیا گیا۔

مارکیز کچھ عرصے سے بیمار تھے اور انھوں نے حال میں اپنی عوامی مصروفیات بہت کم کر دی تھیں۔

ان کے خاندان کی ترجمان فرنانڈا فاملیار نے ٹوئٹر پر اعلان کیا کہ گیبریئل گارسیا مارکیز انتقال کر گئے ہیں۔ ان کا مزید کہنا تھا کہ مارکیز کی اہلیہ اور بیٹوں نے مجھے یہ اطلاع دینے کی اجازت دی ہے۔

کولمبیا کے صدر نے بھی ٹوئٹر کے ذریعے انھیں خراجِ تحسین پیش کیا۔ صدر یوہان مینیوئل سانتوس نے انھیں تاریخ کا بہترین کولمبیائی شہری قرار دیا۔

ان کی وفات کی وجہ فوری طور پر معلوم نہیں ہو سکی تاہم وہ میکسیکو سٹی کے ایک ہسپتال میں پھیپھڑیوں کے انفیکشن کی وجہ سے داخل تھے۔

انھیں گذشتہ ہفتے ہسپتال سے گھر بھیج دیا گیا تھا تاہم ان کی عمر کی وجہ سے ان کی صحت کو نازک قرار دیا گیا تھا۔

میکسیکو سٹی سے بی بی سی کے نامہ نگار وِل گرانٹ کا کہنا ہے کہ ان کے انتقال کا ماتم ان کے آبائی ملک کولمبیا میں تو کیا جائے گا تاہم میکسیکو کے عوام بھی غم زدہ ہوں گے کیونکہ گذشتہ 30 سال سے وہ وہیں مقیم تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption گذشتہ سال مارکیز کے بھائی نے اعتراف کیا تھا کہ گیبریئل اپنی قوتِ حافظہ کھو رہے ہیں

ان کے دیگر ناولوں میں ’لوّ اِن دی ٹائم آف کولرا‘ (وبا کے دنوں میں محبت) اور ’کرونیکل آف اے ڈیتھ فور ٹولڈ‘ شامل ہیں۔

گذشتہ سال گیبریئل گارسیا مارکیز کے بھائی نے کہا تھا کہ ان کے بھائی اپنی یاداشت کھو رہے ہیں۔ جیمی گارسیا نے کارٹیجینا میں طلبہ کو ایک لیکچر کے دوران بتایا کہ ان کے بھائی اکثر فون کر کے ان سے انتہائی بنیادی سوالات پوچھتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ’میرے بھائی کی قوتِ حافظہ میں خلل پیدا ہوگیا ہے۔ کبھی کبھی میں رو پڑتا ہوں کیونکہ مجھے لگتا ہے کہ میں اپنے بھائی کو کھو رہا ہوں۔‘

جیمی گارسیا کے مطابق ان کے بھائی نے لکھنا چھوڑ دیا تھا۔

اس وقت کولمبیا سے بی بی سی کے نامہ نگار ارتورو والس کا کہنا تھا کہ گیبریئل گارسیا کی قوتِ حافظہ میں خلل کی افواہیں پہلے بھی سامنے آئی تھیں تاہم ان کے چھوٹے بھائی جیمی گارسیا ان کے خاندان کے پہلے شخص ہیں جس نے کھلے عام اس کا اعتراف کیا۔

اسی بارے میں