’زندگی میں سنجیدگی جانی واکر سے سیکھی ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ johnny lever
Image caption جانی لیور تمل ناڈ کے رہنے والے ہیں اور انھوں نے کئی سو ہندی فلموں میں اداکاری کی ہے

بالی وڈ کے معروف کامیڈین جانی لیور نے بالی ووڈ میں 400 سے بھی زیادہ فلموں میں اداکاری کی ہے۔ کامیڈی کنگ کہے جانے والے جانی لیور بہت جلد فلم ’بيوٹیفل‘ میں نظر آنے والے ہیں۔ اس فلم میں جانی لیور پنجابی سردار کے روپ میں نظر آئیں گے۔

سنہ 1992 سے لے کر 2000 تک کی تمام فلموں میں جانی لیور کام کرتے نظر آئے لیکن پھر جانی نے فلمیں کم کر دیں۔

اس بابت انھوں نے کہا ’میری جگہ راج پال یادو نے لے لی تھی وہ تمام فلموں میں کام کر رہے تھے اور ایسے میں مجھے اپنی فیس کم کرنے کو کہا گیا۔ کام تو ملتا تھا لیکن پیسے کم دینے کی بات پر میں نے آرام کرنا بہتر سمجھا اور دوسروں کو کام کو دکھانے کا موقع دیا۔ میں کام کے نام پر کچھ بھی نہیں کر سکتا تھا کیونکہ مجھے نہ تو كمپرومائز کرنا تھا اور نہ ہی چھوٹا نظر آنا تھا۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Mohd Naseem Khan
Image caption ان کا کہنا ہے کہ گھریلو زندگی میں سنجیدگی انھوں نے جانی واکر سے سیکھی

جانی لیور کو فلم سٹار کی ممکری (نقالی) کرنے میں مہارت حاصل ہے۔ ان کی اسی خاصیت نے انھیں سٹیج شو کرنے کا موقع دیا۔ ایسے ہی ایک سٹیج شو میں سنیل دت کی ان پر نظر پڑی۔

انھوں نے جانی لیور کو فلم ’درد کا رشتہ‘ میں پہلا بریک دیا۔ لیکن جانی اپنی کامیابی کا کریڈٹ فلم بازی گر کو دیتے ہیں۔

وہ کہتے ہیں ’میں ایک ممكري آرٹسٹ تھا اس لیے مجھے تمام ڈائریکٹر اپنی فلموں میں لیتے تھے اور اپنی فلموں میں کبھی اوم پرکاش کی ممكري کرواتے تو کبھی کشور کمار کی۔ مجھے رول کرنے کا موقع نہیں ملتا تھا لیکن فلم ’بازي گر‘ میں مجھے کردار ادا کرنے کا موقع ملا۔ تب لوگوں نے کہا کی یہ لڑکا تو ایکٹنگ بھی جانتا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ RAJPAL YADAV
Image caption راج پال یادو نے بہت حد تک جانی لیور کی مانگ کم کر دی تھی

انھوں نے مزید بتایا کہ ’12 سال تک مجھے ممكري آرٹسٹ ہی سمجھا جاتا رہا۔ لوگوں کو 12 سال لگ گئے مجھے اداکار سمجھنے میں۔‘

جانی لیور نے اپنی زندگی کو کامیاب بنانے کے لیے بہت جدوجہد کی ہے اور ان کے لیے ایک بڑا چیلنج ہندی سیکھنا تھا۔

Image caption جانی واکر کا ہندی سینیما میں کامیڈی کے بڑے فنکاروں میں شمار ہوتا ہے

جانی کہتے ہیں کہ ’میں تمل ناڈو کا ہوں اور میں نے صرف ساتویں جماعت تک ہی تعلیم حاصل کی ہے۔ ہندی کی تعلیم پانچویں کلاس سے شروع ہو گئی تھی۔ میں نے بہت مشکل سے ہندی بولنا سیکھا۔ کئی ہندی ناول پڑھے تب جاکر آئی مجھے ہندی آئی۔‘

جانی لیور کو فلم انڈسٹری میں بہت سال ہو گئے ہیں اور اس انڈسٹری میں اگر ان کا کوئی اچھا دوست ہے تو وہ اداکار گووندا اور انیل كپور ہیں۔

جانی لیور کی کامیڈی سے بہت سے نوجوان کامیڈی ایکٹر متاثر رہے لیکن خود جانی لیور کس سے متاثر ہوئے؟

جانی لیور نے اس بارے میں کہا کہ ’ایکٹنگ کے لیے جانی واکر، کشور کمار اور محمود صاحب نے مجھے بہت متاثر کیا۔ جانی واکر اچھے ایکٹر تھے اور ان کی ذاتی زندگی بھی بہت اچھی تھی۔ انھوں نے فلم اور فیملی کو بہت اچھا طرح سنبھالا۔‘

انھوں نے مزید کہا کہ ’ان سے میں نے وہ چیز سیکھی اس لیے میں بھی اپنی فیملی والوں کے لیے بہت سنجیدہ ہوں کیونکہ لوگ مجھے دیکھ کر ہنستے ہیں لیکن جس دن آپ کے گھر والے بھی آپ پر ہنسنے لگیں تو آپ کو ٹھوکر ہی ملے گی۔ اس لیے تھوڑا بہت سنجیدہ ہونا ضروری ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Johnny Lever

جانی کہتے ہیں کہ انھوں نے محمود صاحب سے بہت کچھ سیکھا لیکن ان کی فیملی لائف اچھی نہیں تھی۔

جانی لیور کی بیٹی جیمی لیور بھی فلموں میں آنے والی ہیں۔

اس سے خوش ہوکر جانی لیور نے کہا: ’میری بیٹی نے لندن میں تعلیم حاصل کی ہے۔ جب وہ واپس آئی تو وہ ایک مزاحیہ اداکارہ بننا چاہتی تھی۔ ایک پلیٹ فارم پر اس کے کام سے عباس مستان بڑے متاثر ہوئے۔ انھوں نے کہا کہ وہ میری بیٹی کو اپنی اگلی فلم میں لینا چاہتے ہیں۔‘

اسی بارے میں