پریسلے کی پہلی ریکارڈنگ تین لاکھ ڈالر میں فروخت

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption پریسلے کی اہلیہ نے اپنے شوہر کی یاد میں ان کی 80 ویں سالگرہ کا کیک کاٹا

معروف گلوکار ایلوس پریسلے کی پہلی ریکارڈنگ ایک نیلامی میں تین لاکھ ڈالر میں فروخت ہوئی ہے۔

اس کی ابتدائی بولی 50 ہزار ڈالر سے شروع ہوئی تھی۔

ایک نامعلوم خریدار نے آن لائن پر پریسلے کے گیت ’مائی ہیپی نیس‘ جو 78 آرپی ایم پر ریکارڈ کی گئی تھی اس کی بولی لگائی۔

واضح رہے کہ یہ ریکارڈنگ پہلی بار عوامی طور پر فروخت کے لیے رکھی گئی تھی۔

یہ نیلامی پریسلے کے سابقہ مکان گریس لینڈ پر ان کے 80 ویں سالگرہ کے موقعے پر منعقد کی گئی تھی۔

پریسلے کا یہ بیلے سنہ 1953 میں ریکارڈ کیا گیا تھا جب وہ 18 سال کے تھے۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP

انھوں نے یہ گیت اس لیے ریکارڈ کرایا تھا کہ وہ یہ جان سکیں کہ ان کی آواز کیسی ہے اور اس کے لیے انھوں نے چار ڈالر ادا کیے تھے۔

ایسا کہا جاتا ہے کہ اس ریکارڈنگ کا ان کا ایک مقصد اپنی ماں کو تحفہ بھی دینا تھا۔

چونکہ ان کے گھر میں ریکارڈ پلیئر نہیں تھا اس لیے وہ اپنے پہلے پرفارمنس کا نتیجہ جاننے کے لیے اپنے دوست ایڈ لیک کے گھر گئے اور اسے وہیں چھوڑ آئے۔

مسٹر لیک نے اس ریکارڈ کو 60 سال تک محفوظ رکھا لیکن جب ان کا اور ان کی اہلیہ کا انتقال ہو گیا تو یہ ریکارڈ ان کی بھتیجی لوریسا ہلبرن کو ورثہ میں ملا۔

فلوریڈا کی رہائشی مز ہلبرن ریکارڈ کی فروخت کی قیمت پر حیرت زدہ رہ گئیں تاہم وہ ’بہت خوش‘ تھیں۔

انھوں نے کہا کہ ’پہلے دل کی دھڑکن بڑھی ہوئی تھی۔۔۔ لیکن جب یہ ہو چکا تو میں مبہوت ہو گئی یہ حقیقت سے پرے لگ رہا تھا۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ elvis
Image caption اس ریکارڈ کو ایلوس نے اپنی آواز کو جاننے اور اپنی ماں کو تحفہ دینے کے لیے بنوایا تھا

اس موقعے پر پریسلے کے مداحوں کے سامنے پریسلے کی اہلیہ پریسیلا پریسلے نے ایک آٹھ منزلہ کیک کاٹا جو کہ اگر وہ زندہ ہوتے تو ان کا 80واں یوم پیدائش ہوتا۔

مزہلبرن کا کہنا ہے کہ وہ اس پیسے کا کچھ حصہ اپنے بیٹوں کی کالج کی تعلیم پر خرچ کریں گی۔

اس موقعے پر جو دوسری چیزیں نیلام کے لیے رکھی گئیں تھیں ان میں پریسلے کا پہلا ڈرائیونگ لائسنس، ان کا پہنا ہوا سکارف، اور سونے کا ہار جس پر ’ٹی سی بی‘ لکھا ہوا تھا۔

اس یوم پیدائش پر پریسلے کے مداحوں نے دنیا بھر سے شرکت کی جبکہ آسٹریلیا کے شہر سڈنی میں ایک پانچ روزہ جشن کا اہتمام کیا جا رہا ہے۔

اسی بارے میں