’آسکر بعض لوگوں کے لیے شہرت کا ڈھکوسلا ہے‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption فلم پیکو اسی ماہ ریلیز ہو رہی ہے جس میں دیپکا پاڈوکون اور امیتابھ بچن کے علاوہ عرفان خان اہم کردار ادا کر رہے ہیں

بالی وڈ اداکار عرفان خان کہتے ہیں کہ بھارت سے آسکر کے لیے روانہ کی جانے والی فلموں کا انتخاب محض شہرت حاصل کرنے کا ڈھکوسلا ہے۔

عرفان خان ان دنوں اپنی آنے والی فلم ’پيكو‘ کی تشہیر میں مصروف ہیں جو آٹھ مئی کو ریلیز ہو رہی ہے۔

بی بی سی کے لیے ممبئی میں مدھو پال سے خصوصی بات چیت کے دوران عرفان خان نے ’پيكو‘ اور اپنے ہالی وڈ فلم پروجیکٹ کے بارے میں باتیں کیں۔

اداکار عرفان خان کہتے ہیں: ’اس فلم میں رومانس، مزاح اور جذبات تینوں بہت خوب ہیں۔ میں نے پہلی بار امیتابھ بچن، دیپکا پاڈوکون، موسمی چٹرجی، جوہی اور ڈائریکٹر شوجت سرکار کے ساتھ کام کیا اور ان کے ساتھ میرا تجربہ زبردست رہا۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Every Media PR
Image caption عرفان کا کہنا ہے کہ وہ رومانوی اور مزاحیہ فلمیں بھی کرنا چاہتے ہیں

انھوں نے بتایا: ’میں ہمیشہ سنجیدہ ہی نہیں، بلکہ رومانوی اور مزاحیہ کردار بھی کرنا چاہتا تھا۔ بس اچھے سکرپٹ کا انتظار تھا۔ مجھے جب ’پيكو‘ کا سکرپٹ ملا تو میں اس میں اداکاری کے لیے تیار ہو گیا، کیونکہ اس میں رومانس اور مزاح دونوں ہیں۔‘

ہالی وڈ فلموں میں اپنی جگہ بنانے والے عرفان خان بہت ہی جلد ہالی وڈ فلم ’جوراسک پارک 4‘ میں نظر آئیں گے۔ اس فلم میں وہ جوراسک پارک کے مالک کا کردار ادا کر رہے ہیں۔

’جوراسک پارک‘ سیریز کی چوتھی فلم کی شوٹنگ ہوائی میں شروع ہو گی۔ سنہ 2012 میں عرفان خان نے ’لائف آف پائی‘ اور ’دا امیزنگ سپائڈر مین‘ جیسی انتہائی کامیاب ہالی وڈ فلموں میں کردار ادا کیے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Every Media PR
Image caption عرفان خان نے ہالی وڈ کی کئی اہم فلموں میں کام کیا ہے

عرفان خان سے پوچھا گیا کہ کیا ہالی وڈ میں بالی وڈ فنکاروں کو اچھا پیسہ ملتا ہے؟

جواب میں عرفان نے کہا: ’اگر آپ کوئی چھوٹا کردار کر رہے ہیں اور انڈسٹری میں آپ کا خاص مقام نہیں ہے، تو آپ کو کسی انڈسٹری میں پیسے نہیں ملیں گے۔‘

وہ بتاتے ہیں کہ بالی وڈ کے بڑے فنکاروں کے مقابلے ہالی وڈ کے بڑے فنکاروں کو زیادہ پیسے ملتے ہیں، اور جب بالی وڈ اداکار وہاں کام کرنے کے لیے جاتے ہیں تو وہاں ٹیکس کی وجہ سے کچھ بھی پیسے نہیں بچ پاتے۔

آسکر میں انعام کے لیے ہر سال بھارت سے بھی چند فلموں کو روانہ کیا جاتا ہے لیکن وہ فلمیں ٹاپ ٹین تک بھی نہیں پہنچ پاتیں۔

تصویر کے کاپی رائٹ Raindrop Media
Image caption ان دنوں عرفان فلم پیکو کی تشہیر میں مصروف ہیں

آخر ایسا کیوں ہے؟ عرفان کا کہنا ہے: ’بھارت میں آسکر تک پہنچنے کے لیے سنجیدہ کوشش نہیں کی جاتی۔ ہمارے یہاں تو سب بناوٹی ہوتا ہے۔ پانچ دس لوگ مل کر ایک فلم منتخب لیتے ہیں اور اکثر وہ فلمیں غلط پسند ثابت ہوتی ہیں۔‘

ان کا خیال ہے کہ جن فلموں کی کامیابی کا امکان ہوتا ہے انھیں آسکر کے لیے نہیں بھیجا جاتا۔

ان کا کہنا ہے: ’میرے خیال میں ہمارے یہاں آسکر فلم کے انتخاب کا کوئی درست نظام نہیں ہے۔ یہ ایسے لوگوں کے لیے شہرت حاصل کرنے کا محض ڈھکوسلا ہے جن کے پاس حقوق، رابطے اور جان پہچان ہیں۔‘

اسی بارے میں