’اب اپنے شوہر کے ساتھ رہنے کے بجائے مر جانے کو ترجیح‘

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption حمیرا ارشد نے عدالت کو یہ بھی بتایا کہ احمد بٹ بطور شوہر اپنے فرائض ادا نہیں کر رہا

پاکستانی گلوکارہ حمیرا ارشد کے اپنے اداکار شوہر احمد بٹ کے ساتھ اختلافات شدید ہوگئے ہیں اور گلوکارہ نے اپنے شوہر سے طلاق لینے کا فیصلہ کرلیا ہے۔

حمیرا ارشد نے احمد بٹ سے خلع لینے کے لیے لاہور کی مقامی عدالت میں دعوی دائر کیا ہے جس پر عدالت نے پیر کو ابتدائی کارروائی کی۔

فیملی کورٹ کے جج محمد اسلم نے حمیرا ارشد کی خلع کے دعوے پر ان کے شوہر اور اداکار احمد بٹ کو 25 مئی کے لیے نوٹس جاری کیے ہیں۔

گلوکارہ حمیرا ارشد کی اداکار احمد بٹ سے 11 برس پہلے جنوری 2004 میں پسند کی شادی ہوئی تھی تاہم اب کچھ عرصے سے ان میں اختلافات پیدا ہوگئے تھے۔

چند روز قبل احمد بٹ نے پریس کانفرنس کی جس کے بعد حمیرا ارشد نے جوابی پریس کانفرنس کی۔

حمیرا ارشد کے خلع کے لیے دعوی میں الزام لگایا کہ ان کا شوہر احمد بٹ ان پر تشدد کرتا ہے اور اب اس نے گھر سے بھی نکال دیا ہے۔

حمیرا ارشد کے مطابق انھوں نے اپنے شوہر احمد بٹ کو سمجھنے کی بہت کوشش کی لیکن سب بے سود رہیں اور احمد بٹ نے اپنا رویہ تبدیل نہیں کیا۔

احمد بٹ اور حمیرا ارشد کا چار سال کا ایک بیٹا بھی ہے جو حمیرا ارشد کے ساتھ رہتا ہے۔

گلوکارہ کے مطابق ان کے شوہر میری نرمی کو کمروزی سمجھتا ہے اور اس کا رویہ بہتر ہونے کے باعث دن بدن خراب سے خراب ہو رہا ہے۔

حمیرا نے اپنے دعوے میں یہ بھی کہا کہ ’وہ احمد بٹ کے ساتھ زندگی نہیں گزر سکتی ہے اور وہ اپنے شوہر کے ساتھ رہنے کے بجائے مر جانے کو ترجیح دیں گی۔‘

گلوکارہ نے اپنے دعوے میں یہ بھی کہاگیا کہ شادی کے وقت پانچ لاکھ روپے حق مہر مقرر ہوا تھا جو احمد بٹ نے ادا نہیں کیا تاہم اب وہ طلاق کے لیے اپنے حق مہر چھوڑنے کے لیے تیار ہے۔

حمیرا ارشد نے عدالت کو یہ بھی بتایا کہ احمد بٹ بطور شوہر اپنے فرائض ادا نہیں کر رہا جس کی وجہ سے ان کے درمیان ازدواجی تعلقات ختم ہوگئے ہیں۔

گلوکارہ حمیرا ارشد نے عدالت سے استدعا کی خلع کے دعوے کو منظور کرتے ہوئے ان کی شادی ختم کر دی جائے۔

اسی بارے میں