اداکار عمر شریف ایلزہائمرز میں مبتلا ہوگئے

تصویر کے کاپی رائٹ unknown
Image caption مصری اداکار عمر شریف سنہ 1962 میں فلم ’لارنس آف اریبیا‘ میں اداکاری کے بعد عالمی سطح پر منظر عام پر آئے تھے

1960 کی دہائی میں ہالی وڈ کی معروف فلموں ’لارنس آف اریبیا‘ اور ‘ڈاکٹر ژواگو‘ میں اداکاری کرنے والے مصری اداکار عمر شریف میں ایلزہائمرز کی تشخیص ہوئی ہے۔

پیر کو 83 سالہ اداکار کے ایجنٹ سٹیو کینس نے خبر رساں ادارے ایسوسی ایٹڈ پریس سے بات کرتے ہوئے اس خبر کی تصدیق کی ہے۔

عمر شریف کی بیماری اور دیکھ بھال کے حوالے سے مزید تفصیلات منظرعام پر نہیں آئیں۔ واضح رہے کہ عمر شریف کے بیٹے طارق الشریف نے 23 مئی کو ایک ہسپانوی اخبار ال منڈو کو انٹرویو دیتے ہوئے اس بیماری کے بارے میں انکشاف کیا تھا۔

مصری اداکار عمر شریف سنہ 1962 میں ہدایت کار ڈیوڈ لین کی کامیاب فلم ’لارنس آف اریبیا‘ میں اداکاری کے بعد عالمی سطح پر منظر عام پر آئے تھے۔ اس فلم میں معاون کردار ادا کرنے پر انھیں اکیڈمی ایوارڈ کے لیے نامزد کیا گیا تھا۔

اس کامیابی کے بعد انھوں نے ڈیوڈ لین کی ہدایات میں ایک اور فلم ’ڈاکٹر ژواگو‘ میں مرکزی کردار ادا کیا تھا، جس میں معاون کردار جولی کرسٹی نے ادا کیا تھا۔ اس کے بعد انھوں نے باربرا سٹریسینڈ کے ساتھ فلم ’فنی گرل‘ میں اداکاری کے جوہر دکھائے۔

عمر شریف کے بیٹے طارق الشریف نے اخبار ایل مندو کو بتایا: ’وہ جانتے ہیں وہ ایک نامور اداکار ہیں۔ یادداشت کھو جانے سے بہت سے امور پر اثر ہوا ہے، وہ بھول جاتے ہیں وہ کہاں تھے یا کسی فلم میں انھوں نے کس کے ساتھ کام کیا تھا۔‘

’مثال کے طور پر وہ جانتے ہیں کہ یہ ڈاکٹر ژواگو فلم ہے لیکن وہ بھول چکے ہیں کہ یہ کب فلم بند ہوئی تھی۔‘

’وہ فلم کے بارے میں بات کر سکتے ہیں لیکن اس کا نام بھول جاتے ہیں۔‘

عمر شریف نے اپنی آخری فیچر فلم میں سنہ 2013 میں کام کیا تھا۔

اسی بارے میں