’ہیپی برتھ ڈے‘ کی کاپی رائٹ فیس کا تنازع حل ہوگیا

تصویر کے کاپی رائٹ Thinkstock
Image caption اس گیت کی دھن ریاست کینٹکی کی دو بہنوں نے سنہ 1893 میں ترتیب دی تھی

مشہور گیت ’ہیپی برتھ ڈے ٹو یو‘ کے حقِ اشاعت کی فیس کا تنازع امریکہ کی ایک عدالت میں حل ہوگیا ہے۔

میوزک کمپنی وارنر چیپل نے اس گیت کے حقوق کا دعویٰ کیا تھا تاہم رواں سال کے آغاز میں ایک جج نے فیصلہ سنایا تھا کہ اس گیت کی شاعری کو رائیلٹی ادا کیے بغیر استعمال کیا جاسکتا ہے۔

فنکاروں اور فلمسازوں نے ایک گروہ نے برس ہا برس سے اس کمپنی کی جانب سے جمع کی گئی رقوم واپس حاصل کرنے کے لیے مقدمہ دائر کیا تھا۔

فی الحال معاہدے کے نکات منظرعام پر نہیں لائے گئے۔

بتایا جارہا ہے کہ وارنرچیپل کمپنی نے اس گیت کو فلم، ٹی وی، اشتہار یا کسی اور عوام پرفارمنس کے دوران استعمال کرنے پر 20 لاکھ ڈالر سالانہ کمائے ہیں۔

اس کمپنی نے ’پیپی برتھ ڈے ٹو یو‘ کا سنہ 1988 میں جملہ حقوق حاصل کیا تھا تاہم جج نے فیصلہ سنایا ہے کہ یہ حق مخصوص موسیقی کے لیے تھا نہ کہ گیت کے لیے۔

کمپنی کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ ’اگرچہ ہم باعزت طریقے سے عدالت کے فیصلے سے اختلاف کرتے ہیں لیکن ہم خوش ہیں یہ مسئلہ حل ہوگیا ہے۔‘

فنکاروں کے وکیل مارک رفکن نے خبررساں ادارے روئٹرز کو بتایا کہ وہ اس معاہدے سے خوش ہیں تاہم انھوں نے مزید تفصیلات نہیں بتائیں۔

اس گیت کی دھن ریاست کینٹکی کی دو بہنوں نے سنہ 1893 میں ترتیب دی تھی۔

ملڈرڈ اور پیٹی ہل نے اپنے تیار کردہ گیت کو گڈ مارننگ ٹو آل کا نام دیا تھا جو بعد میں دنیا بھر میں سالگرہ کی تقاریب میں گایا جانے والا مقبول گیت بن گیا۔

اسی بارے میں