پلے بوائے محل برائے فروخت لیکن مالک ساتھ رہیں گے

تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption فروخت کی شرط کے مطابق 89 سالہ ہیفنر کو 45 سال تک اِس گھر میں رہنے کی اجازت دی جائے گی

پلے بوائے محل جہاں سینکڑوں تقریبات منعقد کی گئی تھی، اب ایک شرط کے ساتھ فروخت کے لیے دستیاب ہے۔ اِس محل میں موجودہ مالک اور پلے بوائے میگزین کے بانی ہیوگ ہیفنر بھی ساتھ رہیں گے۔

پیر کے روز پلے بوائے میگزین کی ابتدائی کمپنی نے 20 کروڑ امریکی ڈالر کے عوض مغربی لاس اینجلس کی اِس جائیداد کو مارکیٹ میں فروخت کے لیے پیش کیا ہے۔

پانچ ایکڑ پر مشتمل یہ اراضی متعدد فلموں اور ٹی وی پروگراموں میں پرتعیش بیچلر پیڈ کے طور پر دکھائی گئی ہے۔

فروخت کی شرط کے مطابق 89 سالہ ہیفنر کو 45 سال تک اِس گھر میں رہنے کی اجازت دی جائے گی۔

پلے بوائے کے سی ای او سکاٹ فلینڈرز نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ’پلے بوائے محل ہیفنر کے لیے ایک تخلیقی مرکز ہے، ان کی رہائش اور اُن کے کام دونوں کے حوالے سے اور اب اگر یہ فروخت بھی ہو جاتا ہے تو یہ سلسلہ جاری رہے گا۔‘

اِس شاندار محل میں 29 کمرے ہیں، اِس میں زیرزمین شراب خانہ اور ہوم تھیئٹر بھی قائم ہے۔

لیکن جائیداد کی خرید وفروخت کرنے والے ماہرین کا کہنا ہے کہ بیورلی ہلز میں قائم اِس گھر کو موجودہ دور کے حساب سے کافی بہتر بنانے کی ضرورت ہے۔

تاہم اِس گھر میں خریدار کو تاریخ یعنی ماضی دستیاب ہو گا۔ گھر میں پیچھے کی جانب مشہور مصنوعی غار کے ساتھ ایک سوئمنگ پول ہے، جہاں خرگوش کی طرح کے لباس میں ملبوس پلے بوائے خواتین مشہور شخصیات کے ساتھ ملا کرتی تھی۔

’بنیز یعنی خرگوش کی طرز والی پلے بوائے لڑکیوں کے علاہ یہاں بندر، کلغی دار طوطے، مور، افریقن کرین، طوطے اور ٹوکان موجود ہیں۔ اور اِس گھر کے نئے مالک اِن سب کو بھی رکھ سکتے ہیں۔

سنہ 1971 میں ہیفنر نے اِس محل کو دس کروڑ امریکی ڈالر کے عوض خریدا تھا۔ جس کے بعد اِس محل نے سنہ 1959 سے شکاگو میں قائم پلے بوائے کے اصلی محل کی جگہ لے لی تھی۔

یہ فروخت کا معاملہ اُس وقت سامنے آیا ہے کہ جب پلے بوائے نے اپنے کاروبار میں تبدیلیاں کی ہیں کہ آن لائن فحش تصاویر عام ہو جانے سے برہنہ تصاویر کی ضروت نہیں رہی ہے۔

گذشتہ برس میگزین نے اعلان کیا تھا کہ وہ اب اپنے امریکی جریدے میں خواتین کی مکمل برہنہ تصاویر شائع نہیں کریں گے۔

اسی بارے میں