چینی مداح لیڈی گاگا سے ناراض

تصویر کے کاپی رائٹ Getty
Image caption چینی میڈیا میں 26 جون کو ہونے والی اس ملاقات کے حوالے سے خاموشی ہے

چین میں لوگوں نے بودھوں کے روحانی پیشوا دلائی لاما کی گلوکارہ لیڈی گاگا سے ملاقات پر شدید ناراضی کا اظہار کیا ہے۔

لیڈی گاگا کی جانب سے اس ملاقات کی تصاویر سوشل میڈیا پر ڈالے جانے کے بعد آئن لائن چہ مگوئیاں شروع ہو گئی ہیں کہ آیا وہ اب بھی چین میں اپنے فن کا مظاہرہ کر سکیں گی یا نہیں۔

* براک اوباما کی دلائی لاما سے ملاقات پر چین برہم

لیڈی گاگا چین میں مقبول ترین مغربی گلوکاروں میں سے ایک ہیں، لیکن انھوں نے دلائی لاما کے لیے حمایت ظاہر کر کے چینی مداحوں کو ناراض کر دیا ہے۔ چین میں اکثریت کا خیال ہے کہ دلائی لاما تبت میں علیحدگی پسندی کی سربراہی کرتے ہیں۔

دلائی لاما کا کہنا ہے کہ وہ اب ایک درمیانی راستہ تجویز کر رہے ہیں۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ چاہتے ہیں کہ تبت کو آزادی نہیں بلکہ خود مختاری دی جائے۔

لیڈی گاگا کی چین میں مقبولیت کا مطلب ہے کہ وہ انٹرٹینمنٹ کے حوالے سے مرکزی میڈیا میں سب سے زیادہ موضوعِ بحث ہوتی ہیں۔

تاہم چینی میڈیا میں 26 جون کو ہونے والی اس ملاقات پر خاموشی طاری ہے۔

سماجی رابطے کی سائٹ ویبو پر بعض صارفین کی وہ پوسٹیں بھی سنسر کر دی گئیں جن میں لیڈی گاگا کی تصاویر تھیں۔

تاہم ان کے مداح اس بارے میں بات کر رہے ہیں اور میوزک وارز نامی ایک صارف کی پوسٹ پر 2000 افراد نے ردِ عمل دیا۔

کئی نے کہا کہ لیڈی گاگا یا تو ’بیوقوف‘ ہیں یا ’لاعلم۔‘ کیا وہ چین کی سیاسی حساسیت کے بارے میں نہیں جانتیں؟

ایک صارف نے لکھا: ’انھوں نے اہنے مداحوں کا خیال نہیں کیا۔‘ اس پوسٹ پر 1000 سے زیادہ لائیکس آئیں۔

کئی نے ان پر اپنی مقبولیت کو قائم رکھنے کے لیے خود تنازع کا باعث بننے کا الزام عائد کیا۔

ایک صارف نے لکھا: ’ہمیں ان کی خواہش کا حترام کرنا چاہیے وہ جس سے چاہیں ملیں۔‘ ان کی پوسٹ کو 400 سے زیادہ لوگوں سے پسند کیا۔

کئی لوگ یہ چہ مگوئیاں کر رہے ہیں کہ آیا اس ملاقات سے ان کے آئندہ چین میں کنسرٹ پر پابندی تو نہیں لگ جائے گی۔

گذشتہ برس کئی مغربی فنکاروں کے دلائی لاما سے تعلقات کی وجہ سے چین میں ان کی سرگرمیاں معطل کر دی گئی تھیں۔

اسی بارے میں