فلم ’مالک‘ کی برآمد پر پابندی عائد کردی گئی

Image caption فلم میں سندھ کے وزیرِ اعلیٰ کو جرائم میں ملوث دکھایا گیا تھا جسے اس کا اپنا محافظ آخر میں قتل کردیتا ہے

پاکستانی وزارتِ تجارت نے فیڈرل بورڈ آف ریونیو کو ہدایت کی ہے کہ پاکستانی فلم ’مالک‘ کی بیرونِ ملک برآمد پر فی الفور پابندی عائد کی جائے۔

واضع رہے کہ فلم ’مالک‘ 26 اگست سے پاکستان سے باہر کئی ممالک میں نمائش کے لیے پیش کی جارہی تھی۔

یاد رہے کہ فلم مالک رواں سال اپریل کے پہلے ہفتے میں نمائش کے لیے پیش کی گئی تھی اور تین ہفتے کی نمائش کے بعد اس پر وفاقی وزارتِ اطلاعات کی جانب سے پابندی عائد کردی گئی تھی۔

اس ضمن میں فلم کی ہدایتکار عاشر عظیم نے بی بی سی کو بتایا کہ انھیں بدھ کی شب ایک نوٹیفیکیشن ملا ہے جس کے تحت وزارتِ اطلاعات نے وزارتِ تجارت سے درخواست کی ہے کہ فلم کی برآمد روکی جائے جس کے بعد وزارتِ تجارت نے وفاقی بورڈ آف ریونیو کو ہدایت کی ہے کہ اس فلم کی بیرونِ ملک نمائش پر پابندی عائد کی جائے۔

عاشر عظیم نے اسے سراسر زیادتی قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ کسی بھی قانون کے تحت فلم کی برآمد نہیں روکی جاسکتی کیونکہ ملک کا قانون صرف ملک کے اندر کسی بھی فلم کی نمائش پر پابندی عائد کرنے کا حق حکومت کو دیتا ہے۔

Image caption فلم کے ہدایتکار عاشر عظیم نے اس فیصلے کے خلاف عدالت سے رجوع کر رکھا ہے

انھوں نے کہا کہ فلم سینسر بورڈ کے قانون کے تحت انڈین فلموں کی پاکستان میں نمائش کی ہی نہیں جاسکتی مگر یہی وزارت تقریباً ہر انڈین فلم کو استثنٰی کا سرٹیفیکیٹ جاری کرتی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ فلم میں صرف چند سیاستدانوں پر نکتہ چینی کی گئی ہے جس کی بنیاد پر فلم پر پابندی عائد کرنا اور اس حد تک کہ بیرونِ ملک مقیم پاکستانی بھی یہ فلم نہ دیکھ سکیں بہت زیادتی ہے۔

فلم ’مالک‘ میں سندھ کے وزیرِ اعلیٰ کو جرائم میں ملوث دکھایا گیا تھا جسے اس کا اپنا محافظ آخر میں قتل کردیتا ہے۔ میڈیا میں اس فلم پر کافی نکتہ چینی کی گئی تھی جس کے بعد اس کا سینسر سرٹیفیکیٹ واپس لینے کا نوٹیفیکیشن لیا گیا تھا۔

فلم کے ہدایتکار عاشر عظیم نے اس فیصلے کے خلاف عدالت سے رجوع کر رکھا ہے جبکہ درایں اثنا انھوں نے 26 اگست سےاس فلم کو مشرقِ وسطٰی ، یورپ ، امریکا اور آسٹریلیا سمیت دنیا کے کئی ممالک میں نمائش کے لیے پیش کرنے کا اعلان کیا تھا۔

اسی بارے میں