قریب المرگ گلوکار کا الوداعی کنسرٹ

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption براؤنی کو ان کے زرق برق لباس اور گہرے مفاہیم والے گیت کے لیے یاد کیا جاتا ہے

کینیڈا کے ایک موسیقی کے بینڈ نے اپنا جذباتی الودا‏عی کنسرٹ پیش کیا ہے کیونکہ ان کے بینڈ کے رہنما کے دماغ میں کینسر کی تشخیص ہوئی ہے۔

’دی ٹریجیکلی ہپ‘ نامی بینڈ کے آخری شو کے تمام ٹکٹ فروخت ہو چکے تھے اور یہ شو آنٹوریو کے گنسٹن میں سنیچر کو ہوا جسے پورے کینیڈا میں براہ راست نشر کیا گيا۔

وزیر اعظم جسٹن ٹریڈیو نے جو کہ شو میں موجود تھے کہا کہ ’یہ بینڈ گذشتہ 30 برسوں سے کینیڈا کے ساؤنڈ ٹریک (نغمے) لکھ رہا تھا۔‘

اس بینڈ کے رہنما گلوکار 52 سالہ گورڈ براؤن نے مئی میں اپنی بیماری کے بارے میں بتایا تھا اور اس خبر سے کینیڈا بھر میں صدمے کا ماحول پیدا ہو گيا تھا۔

کینیڈا کے نشریاتی ادارے نے مسٹر براؤن کو ملک کا غیر سرکاری ’پوئٹ لاریئٹ‘ یعنی ملک الشعراء قرار دیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Twitter
Image caption کینیڈا کے وزیر اعظم شو میں موجود تھے اور انھوں نے بینڈ کی وال پر اپنے تاثرات لکھے

گلوب اینڈ میل اخبار نے لکھا کہ ’15 سٹاپ مین مشین ٹور نے افسردگی کی ایک لکیر اپنے پیچھے چھوڑی ہے تاہم پورے ملک میں اس پر جشن کا سماں بھی رہا ہے۔‘

وزیر اعظم ٹریڈیو نے شو کے بعد ٹویٹ کیا کہ ’یہ بینڈ ہمیشہ ہمارے دلوں اور پسندیدہ نغمو ں کی فہرست میں رہے گا۔‘

انھوں نے ایک دیوار پر پیغام لکھتے ہوئے اپنی تصویر بھی ٹویٹ کی جس میں انھوں نے اس بینڈ کو ’کینیڈا کا بینڈ‘ قرار دیا ہے۔

اس بینڈ کا قیام سنہ 1980 کی دہائي میں عمل میں آیا تھا اور اس کے نغموں میں کینیڈا کی زندگی کی ترجمانی تھی جس میں ایک چھوٹے شہر کی خصوصیت تھی اور اس نے ملک گیر پیمانے پر لوگوں کا دل جیت لیا۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption شو کے تمام ٹکٹ فروخت ہو چکے تھے اور اسے ملک بھر میں براہ راست نشر کیا گيا

انھوں نے ایک کالج بینڈ کے طور پر اپنے سفر کا آغاز کیا تھا اور ان کے 14 البم کی کامیابی زیادہ تر کینیڈا تک محدود رہی۔

بہت سےکینیڈا والے اسے صرف ’ہپ‘ کے نام سے جانتے ہیں اور ان کے گیت ان کی قومی شناخت بن گئي۔

گنسٹن نے سنیچر کے دن کو مخصوص طور پر ’یوم دی ٹریجیکلی ہپ‘ قرار دیا۔

اسی بارے میں