فلم ’مالک‘ پر عائد پابندی ہٹا دی گئی

تصویر کے کاپی رائٹ FB Maalik
Image caption وفاقی حکوت کا موقف تھا کہ اس فلم میں افغان جنگ کے ایک شدت پسند کو ہیرو کے طور پر پیش کیا گیا ہے جس کی وجہ سے اسے پابندی کا سامنا ہے

سندھ ہائی کورٹ نے فلم مالک پر عائد پابندی ختم کرتے ہوئے فلم کی پورے ملک میں نمائش کی اجازت دے دی ہے۔

یاد رہے کہ پاکستانی فلم مالک آٹھ اپریل کو ریلیز کی گئی تھی جس کی نمائش کے تین ہفتے کے بعد اس فلم پر وفاقی وزارتِ اطلاعات کی جانب موشن پکچرز آرڈیننس کی شق نو کے تحت 26 اپریل کو پابندی عائد کر دی گئی تھی۔

اس سے پہلے اس فلم کی برآمد پر بھی پابندی عائد کر کے بین الاقوامی نمائش روک دی گئی تھی۔

مالک کے ہدایت کار اور مرکزی کردار عاشر عظیم نے بی بی سی کو بتایا کہ سندھ ہائی کورٹ کے چیف جسٹس سجاد علی شاہ کی سربراہی میں قائم ڈویژنل بینچ نے متفقہ طور پر فلم مالک پر عائد پابندی یکسر ختم کرنے کی ہدایت کی ہے۔

اس موقعے پر وفاق کے وکیل نے اس فیصلے پر اپیل کرنے کے لیے دس روز کی استدعا کی جو مسترد کر دی گئی۔

عاشر عظیم نے بی بی سی کو بتایا کہ عاشر عظیم نے بی بی سی کو بتایا کہ مالک پاکستانی فلم انڈسٹری کی ترقی کی خاطر کئی سینیما گھروں میں آئندہ جمعے سے نمائش کے لیے پیش کی جا رہی ہے۔

انھوں نے کہا کہ یہ بہت مشکل عمل تھا مگر تقسیم کاروں اور سینیما مالکان نے پاکستانی فلمی صنعت کی ترویج کے لیے یہ قدم اٹھایا ہے ورنہ سینیماؤں میں جگہ نہیں تھی۔

انھوں نے مزید بتایا کہ حکومت نے آٹھ اگست کو فلم کی برآمد پر پابندی عائد کی تھی تاہم وہ اس سے پہلے جولائی ہی میں فلم مالک کو آسٹریلیا، نیوزی لینڈ، امریکہ، کینیڈا اور برطانیہ برآمد کر چکے تھے اس لیے ان ممالک میں اس فلم کی نمائش اگست میں کی گئی تاہم خلیجی ممالک میں اس فلم کو نمائش کے لیے پیش نہیں کیا جا سکا۔

Image caption سینسر بورڈ کے مطابق اس فلم میں متعدد جگہ پر وزیرِ اعلیٰ یا چیف منسٹر کا لفظ آیا تھا جو قابلِ اعتراض ہے

اس فلم کی کہانی ایک ایسے سابق ایس ایس جی کمانڈو کی ہے جو بعد ازاں اپنی ذاتی سکیورٹی کمپنی کھولتا ہے اور اسے ایک صوبے کے وزیرِ اعلیٰ کی حفاظت کی ذمہ داری ملتی ہے تاہم وہ وزیر اعلیٰ ایک انتہائی بدعنوان شخص ہوتا ہے جو خواتین کی آبروریزی میں بھی ملوث ہوتا ہے۔ اسی وجہ سے فلم کا ہیرو اسے مار کر خود کو پولیس کے حوالے کر دیتا ہے۔

اس سے پہلے سندھ سینسر بورڈ نے اس فلم کا سینسر سرٹیفکیٹ معطل کر دیا تھا کیونکہ سینسر بورڈ کے مطابق اس فلم میں متعدد جگہ پر وزیرِ اعلیٰ یا چیف منسٹر کا لفظ آیا تھا۔ شکایت کے بعد عاشر عظیم نے وہ لفظ ہٹایا دیا اور یہ فلم ریلیز کردی گئی تاہم اُسی شام وفاقی وزارتِ اطلاعات و نشریات نے اس فلم پر پابندی عائد کر دی۔

وفاقی حکوت کا موقف تھا کہ اس فلم میں افغان جنگ کے ایک شدت پسند کو ہیرو کے طور پر پیش کیا گیا ہے جس کی وجہ سے اسے پابندی کا سامنا ہے۔

عاشر عظیم نے بتایا کہ ان کی فلم نے پابندی سے پہلے تقریباً تین ہفتوں کے دوران چار کروڑ کا کاروبار کیا تھا۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں