صحافی کو فحش پیغامات بھیجنے والے کو ملک بدر کر دیا گیا

تصویر کے کاپی رائٹ Facebook: ranaayyubjournalist
Image caption دلی میں مقیم رعنا ایوب اپنی بے باک صحافت کی وجہ سے شہرت رکھتی ہیں

دلی کی ایک صحافی رعنا ایوب نے مشرق وسطیٰ میں مقیم اپنے ایک ہم وطن کی جانب سے بھیجے گئے ناشائستہ پیغامات کو فیس بک پر شائع کیا جس کے بعد اس شخص کو نہ صرف ملازمت سے نکال دیا گیا ہے بلکہ ملک بدر بھی کر دیا گیا ہے۔

دلی میں مقیم رعنا ایوب اپنی بے باک صحافت کی وجہ سے شہرت رکھتی ہیں اور گجرات فسادات پر ان کی تحقیق 'گجرات فائلز' کے نام سے چھپ چکی ہے۔

رعنا ایوب نے چھ اپریل کو فیس بک پر ان کو بھیجے جانے والے فحش پیغامات کی سکرین شاٹس کو شیئر کرتے ہوئے لکھا تھا کہ انھیں اس قسم کے پیغامات بھیجے جا رہے ہیں۔ انھوں نے مزید لکھا کہ ’یہ صرف اس نازیبا مواد کی ایک مثال ہے جو مجھے روز بھیجا جاتا ہے‘۔

ان کا کہنا تھا کہ ’اب وقت ہے اس بیمار ذہن والے شخص کے چہرے سے پردہ اٹھا دیا جائے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Ranaayyub twitter

رعنا ایوب کو ناشائستہ پیغامات بھیجنے والا بالاچندرن لعل دبئی کی 'نینشل پینٹس' نامی کمپنی میں ملازم تھا۔

رعنا ایوب نے بی بی سی اردو کو بتایا کہ اس شخص کے خلاف شکایت انہوں نے نہیں کی تھی بلکہ انہوں نے تو عرب امارات میں مقیم چند دوستوں سے اس بارے میں ذکر کیا جس کے بعد کسی خیر خواہ نے اس شخص کی کمپنی کو شکایت کر دی۔

رعنا ایوب نے یہ بھی بتایا کہ ان کے خیال میں شاید وہ شخص انڈیا پہنچ چکا ہے اور انہوں نے دلی میں مذکورہ شخص کے خلاف ایک آن لائن ایف آئی آر بھی درج کروائی ہے۔

کمپنی کو اس ملازم کی حرکات کا معلوم ہوتے ہی اسے ملازمت سے برخاست کر دیا گیا۔

نیشنل پینٹس نے معاملے کے سامنے آنے کے صرف دو روز کے اندر ایک پیغام میں کہا: 'ہم نے اطلاعات کی تصدیق کر لی ہے اور اس شخص کو ملازمت سے برخاست کر دیا گیا ہے۔'

کچھ روز پہلے رعنا ایوب نے اپنی ٹویٹ میں لکھا کہ 'لعل کا ویزہ بھی ختم کر دیا گیا ہے اور اسے متحدہ عرب امارات سے واپس انڈیا بھیجا جا رہا ہے۔‘

تصویر کے کاپی رائٹ Rana Ayyub
Image caption رعنا نے فیس بک پر بتایا کہ اس شخص کو نوکری سے برخاست کر دیا گیا ہے

رعنا ایوب نے بز فیڈ کو بتایا کہ انھیں بے ہودہ پیغامات تو ملتے ہی رہتے ہیں لیکن اس شخص نے تو اپنے ذاتی پروفائل سے انھیں ایسے پیغامات بھیجے۔ بالاچندرن لعل نے جس پروفائل سے رعنا ایوب کو ناشائستہ پیغامات بھیجے اس پروفائل کی تصویر میں وہ اپنی بیوی کے ساتھ نظر آ رہے ہیں۔

رعنا ایوب کہتی ہیں: 'میں نے اس لیے اسے بے نقاب کرنے کا فیصلہ کیا کہ بہت ہو چکا۔ ماضی میں جب بھی میں نے لوگوں کو شکایت کی تو پولیس نے مجھے کہا کہ کچھ نہیں ہوسکتا کیونکہ یہ پیغامات بےنامی اکاونٹ سے بھیجے گئے ہیں۔ کمپنی نے مجھے یہ بھی بتایا کہ یہ شخص کئی دوسری عورتوں کو بھی ایسے گھٹیا پیغامات بھجوا رہا تھا۔'

تصویر کے کاپی رائٹ Rana Ayuub
Image caption عرب امارات کی اس کمپنی نے رعنا ایوب سے رابطہ کر کے معذرت کی

رعنا ایوب نے کہا کہ کمپنی نے مجھ سے رابطہ کر کے بالاچندرن لعل کے رویے پر معذرت کی اور انھیں پھول بھیجنے کی پیشکش بھی کی۔

’ایسا انڈین کمپنیوں میں نہیں ہوتا۔ مجھے یہ بہت اچھا لگا اور اس سے میرا حوصلہ بڑھا ہے۔'

بھارت کے سوشل میڈیا پر رعنا ایوب کی تعریف کی جا رہی ہے اور لوگ امید کر رہے ہیں کہ انڈین کمپنیاں بھی اس طرح کے واقعات پر ایسے ہی ردعمل کا اظہار کریں گے جو اس کمپنی نے کیا ہے۔

تصویر کے کاپی رائٹ Buzzfeed