تندولکر کی بیٹی کو ہراساں کرنے والا شخص گرفتار

تصویر کے کاپی رائٹ Getty Images
Image caption پولیس کے مطابق دیبکمار کا کہنا ہے کہ اس نے پہلی بار سچن تندولکر کی بیٹی کو کرکٹ سٹیڈیم میں دیکھا تھا

انڈیا میں پولیس نے ایک شخص کو کرکٹر سچن تندولکر کی بیٹی کو حراساں کرنے کے الزام میں گرفتار کیا ہے۔

دیبکمار میٹی پر الزام ہے کہ انھوں نے سچن تندولکر کے گھر 20 سے زیادہ بار فون کیا اور سارا تندولکر کو دھمکیاں دیں کہ اگر انھوں نے اس سے شادی سے انکار کیا تو وہ سارا کو اغوا کر لے گا۔

انڈین اخبار ہندوستان ٹائمز کے مطابق دیبکمار کے گھر والوں کا کہنا ہے کہ اس کا دماغی توازن درست نہیں ہے اور وہ سچن کو اپنا سسر کہتا ہے۔

اطلاعات کے مطابق یہ شخص انڈیا کی ریاست مغربی بنگال کا رہائشی ہے اور اتوار کو اسے وہیں سے حراست میں لیا گیا۔

خیال رہے کہ سارا تندولکر ممبئی میں اپنے والدین کے ساتھ رہتی ہیں اور اس شخص کے خلاف انھوں نے ممبئی پولیس کو ہی شکایت درج کروائی تھی۔

پولیس نے بی بی سی کو بتایا ہے کہ اس شخص کو گرفتار کر کے ممبئی لایا گیا ہے اور پیر کو اسے عدالت کے سامنے پیش کیا جائے گا۔

پولیس کے مطابق دیبکمار کا کہنا ہے کہ اس نے پہلی بار سچن تندولکر کی بیٹی کو کرکٹ سٹیڈیم میں دیکھا تھا۔

اس شخص کے مطابق تندولکر کے گھر کا فون نمبر اس نے اپنے ایک رشتہ دار کے ذریعے حاصل کیا، تاہم پولیس اس بارے میں تحقیقات کر رہی ہے۔

متعلقہ عنوانات

اسی بارے میں