عوامی پارلیمان سب سے بڑی ہے: انا ہزارے

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption یہ ہر بھارتی کی جیت ہے: انا ہزارے

بھارتی حکومت کی جانب سے مطالبات تسلیم کیے جانے کے بعد بدعنوانی کےخلاف سرگرم بزرگ سماجی کارکن انا ہزارے نے بارہ دن سے جاری بھوک ہڑتال ختم کر دی ہے۔

اتوار کو انہیں دو چھوٹی بچیوں اقراء اور سمرن نے ناریل پانی پلایا اور شہد کھلایا۔ ان لڑکیوں کا تعلق مسلمان اور دلت خاندان سے تھا۔

اس موقع پر رام لیلا میدان میں جشن کا سا سماں ہے اور وہاں جمع ہزاروں افراد نے پرجوش انداز میں نعرے بازی کی اور بھارتی پرچم لہرائے۔

اننا ہزارے اس وقت دلی کے نواحی علاقے گڈگاؤں میں واقع ویدانتا ہسپتال میں داخل ہیں اور انہیں ڈاکٹروں کی نگرانی میں رکھا گیا ہے۔

ان افراد سے خطاب کرتے ہوئے انا ہزارے کا کہنا تھا کہ مطالبات کی منظوری ’ہر بھارتی کی جیت ہے‘۔

انہوں نے کہا کہ اگر جن لوك پال کے معاملے پر پارلیمان پیچھے ہٹا تو عوام کو پھر سے کھڑا ہونا ہوگا کیونکہ پارلیمنٹ سے بڑی عوام کی پارلیمنٹ ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’عوام کی پارلیمان اس پارلیمان سے کہیں بڑی ہے۔ پارلیمنٹ کو یہ فیصلہ عوام کے دباؤ میں آ کر کرنا پڑا ہے۔ اس تحریک نے یہ یقینی بنا دیا ہے کہ ہم بدعنوانی سے آزاد ملک بنا سکیں گے‘۔

انا ہزارے نے کہا کہ ’ اقتدار کی عوام تک منتقلی سے ہی لوگوں کے ہاتھوں میں صحیح طاقت آ سکے گی‘۔ ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ ’یہ فخر کی بات ہے کہ ملک میں اتنی بڑا تحریک چلی اور کوئی تشدد نہیں ہوا۔ یہ دنیا کے لیے ایک مثال ہے‘۔

انا کی ٹیم کے رکن اروند كجریوال نے کہا کہ وہ تمام سیاسی جماعتوں اور ان لوگوں کا شکریہ ادا کرتے ہیں جن کے سڑکوں پر آنے کی وجہ سے حکومت پر دباؤ پڑا۔ ان کا کہنا تھا کہ ’سیاسی جماعتوں کے تعاون کے بغیر یہ قرارداد منظور نہیں ہوتی۔ ہم ان کا شکریہ ادا کرتے ہیں‘۔

اس سے پہلے سنیچر کو لوک سبھا اور راجیہ سبھا میں احتساب کے بارے میں انا ہزارے کے تینوں مطالبات پر اصولی اتفاق رائے ہو گیا تھا اور یہ فیصلہ کیا گیا تھا کہ تمام ارکان کی رائے کو لوک پال بل پر غور کرنے والی کمیٹی کو بھیج دیا جائے۔

پہلے حکومت اتفاق رائے کے ساتھ ایک بیان منظور کروا کر انا ہزارے کو بھیجنا چاہتی تھی لیکن انا ہزارے کی ٹیم ووٹنگ کی ضد پر اڑ گئی لیکن بعد میں اتفاق رائے سے قرارداد منظور کر لی گئی کیونکہ جس ضابطے کے تحت بحث ہوئی تھی اس میں ووٹنگ کی گنجائش نہیں تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ Reuters
Image caption اناّ کی بھوک ہڑتال کے خاتمے پر رام لیلا میدان میں جشن کا سا سماں تھا

انا ہزارے نے جمعہ کو وزیر اعظم کو لکھے گئے خط میں کہا تھا کہ وہ تین امور پر پارلیمنٹ کی منظوری چاہتے ہیں اور اگر ان پر پارلیمان میں اتفاق رائے ہو جائے تو وہ اپنی بھوک ہڑتال ختم کرنے پر غور کر سکتے ہیں۔

انہوں نے جن لوك پال کے جن تین اہم مسائل پر پارلیمنٹ میں اتفاق رائے کا مطالبہ کیا تھا ان میں سے ایک یہ تھا کہ اسی قانون کے ذریعہ لوك ايكت بھی بنائے جائیں، دوسرا ہر شعبہ میں عوامی مسائل کے لیے سٹینڈنس چارٹر بنایا جائے جسے نہ ماننے پر متعلقہ افسران کے خلاف کارروائی ہو اور تیسرا یہ کہ مرکزی حکومت اور ریاست کے تمام ملازمین کو اس بل کے دائرے میں لایا جائے۔

سینیچر کی صبح پارلیمان میں بحث کا آغاز ہونے کے چند ہی لمحوں کے اندر یہ واضح ہوگیا تھا کہ حکومت نے معمولی تحفظات کے ساتھ انا ہزارے کے مطالبات تسلیم کرنے کا فیصلہ کر لیا ہے۔

اسی بارے میں