’مہنگائی پر قابو پانا سب سے بڑا چیلنج‘

منموہن سنگھ
Image caption کرپشن پر قابو پانے کا یہ بہت مناسب وقت ہے:منموہن سنگھ

بھارت کے وزیراعظم منموہن سنگھ نے ملک میں عام اشیاء کی بڑھتی ہوئي قیمتوں اور بدعنوانی پر تشویش ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ ان کی حکومت اس پر قابو پانے کی کوششیں کرتی رہےگي۔

دلی میں مختلف ریاستوں کےگورنروں کے ایک اجلاس سے اپنے خطاب میں انہوں نے کہا کہ غذائی اشیاء کی بڑھتی قیمتیں تشویش کا باعث ہیں اور ریزرو بینک آ‌ف انڈیا اس سلسلے میں ضروری اقدامات کرتا رہےگا۔

بھارت کے مرکزی بینک نے قیمتوں پر قابو پانے کے لیے گزشتہ چند ماہ میں کئی بار سود کی شرحوں میں اضافہ کیا ہے جس سے ملک کی معیشت کی رفتار بھی سست ہوئي ہے۔

منموہن سنگھ نے کہا’اس وقت افراط زر کی شرح پر قابو پاتے ہوئے معیشت کی ترقی کو یقینی بنانا سب سے بڑا چيلنج ہے‘۔

ان کا کہنا تھا کہ اس سلسلے میں ان کی حکومت نے کچھ سخت قدم اٹھائے ہیں اور آنے والے دنوں میں یہ کوششیں جاری رہیں گي۔

سرکاری اعداد و شمار کے مطابق گزشتہ ہفتہ افراط زر کی شرح گیارہ اعشاریہ تینتالیس پہنچ گئی تھی اور گزشتہ چھ ماہ میں یہ سب سے بڑا اضافہ ہے۔

حکومت کے لیے یہ اضافہ تشویش کا باعث ہے کیونکہ ریزرو بینک کی طرف جو کوششیں کی جاتی رہی ہیں اس کا اثر بازار پر دکھائی نہیں دے رہا ہے۔

منموہن سنگھ نے کہا کہ غذائي اشیاء پر قابو پانے کے لیے زرعی پیداوار بڑھانے کی بھی سخت ضرورت ہے۔

اس موقع پر منموہن سنگھ نے بڑھتی ہوئی بدعنوانی پر بھی تشویش ظاہر کی اور کہا کہ کرپشن پر قابو پانے کا یہ بہت مناسب وقت ہے۔

انہوں نے کہا کی حکومت اپنے طرز عمل میں شفافیت لانے اور اسے جوابدہ بنانے کے لیے تمام اقدامات کریگي۔ ان کہنا تھا کہ حکومت لوک پال بل لانے کے اپنے وعدے پر قائم ہے۔

اس وقت بھارت میں بڑھتی مہنگائی اور بدعنوانی کے حوالے سے لوگوں میں بے چینی پائی جاتی ہے۔ اپوزیشن جماعتیں اس کے لیے حکومت کی معاشی پالیسیوں کو ذمہ دار مانتے ہیں۔

اسی بارے میں