ریلوں کے کرائے میں بیشتر اضافے واپس

مکل رائے تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption مکل رائے کو تین روز قبل ہی وزیر ریل مقرر کیا گيا تھا

بھارت کے نئے وزیرِ ریل مکل رائے نے فرسٹ اور سیکنڈ ایئر کنڈیشن کلاس کے علاوہ سبھی درجوں کے کرائے میں اضافہ واپس لینے اعلان کیا ہے۔

گزشتہ ہفتے سابق وزیر ریل دنیش تریویدی نے ریل بجٹ پیش کرتے ہوئے تقریباً ہر زمرے کے کرائیوں میں اضافے کا اعلان کیا تھا۔

لیکن ان کے بجٹ پیش کرنے کے بعد ہی ان کی جماعت ترنمول کانگریس نے کرائیوں میں اضافے کو واپس لینے اور ان کے استعفے کا مطالبہ کر دیا۔

جمعرات کو پارلیمان میں بحث کے دوران مکل رائے نے کرائے میں کیےگئے اضافے کو واپس لینے کا اعلان کیا۔

انہوں نے کہا کہ کرائے میں اضافہ عام آدمی کے لیے بوجھ ثابت ہوتا اس لیے مشکلات کے باوجود اسے واپس لیا جاتا ہے۔

مکل رائے کے اعلان کے مطابق اب صرف درجہ اؤل اور درجہ دوئم کے ایئر کنڈیشن کے کرائے میں اضافہ برقرار رہےگا اور باقی سب کا نفاذ نہیں ہوگا۔

بجٹ میں مضافاتی علاقے کی عام ٹرینوں کے درجہ دوئم کے کرائے میں دو پیسہ فی کلو میٹر، میل اور ایکسپریس ریل گاڑیوں میں تین پیسہ اور سلیپر کلاس میں پانچ پیسہ فی کلومیٹر کے اضافہ کی تجویز پیش کی گئي تھی۔

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption ریل بجٹ میں ریل نظام کے نیٹ کو وسعت دینے پر زیادہ توجہ دی گئی ہے

سادہ ایئر کنڈيشن کلاس میں دس پیسے فی کلو میٹر، اے سی دوئم میں پندرہ پیسے فی کلو میٹر اور درجہ اوّل کے اے سی کرائے میں تیس پیسے فی کلومیٹر کا اضافہ کیا گيا تھا۔

یہ کرایہ تقریباً نو برس بعد بڑھایا گيا تھا اور تقریباً سبھی نے اس کا خیر مقدم کیا تھا۔ حکومت نے بھی اس بجٹ کی تعریف کی تھی لیکن ممتا بینرجی کے سامنے کسی کی نہیں چلی۔

ایک ہفتے قبل ریل بجٹ پیش کرنے والے سابق وزیر دنیش ترویدی اور موجودہ وزیر مکل رائے دونوں ہی کا تعلق ممتا بینرجی کی جماعت ترنمول کانگریس سے ہے۔

چونکہ ممتا بینرجی دنیش کے بجٹ سے خوش نہیں تھیں اس لیے ان کا استعفٰی طلب کیا تھا اور وزیر اعظم منموہن سنگھ نے اس پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے ان کا استعفٰی قبول کر لیا تھا۔

اسی بارے میں