ایئر انڈیا کے پائلٹس پھر ہڑتال پر

Image caption ہڑتال کی وجہ سے منگل کو کئی بین الاقوامی پروازیں ملتوی کر دی گئیں

بھارت کی قومی فضائی کمپنی ایئر انڈیا میں ایک بار پھر سے ہڑتال شروع ہو گئی ہے اور کمپنی کے ڈیڑھ سو سے زائد پائلٹس نے ’خود کو بیمار قرار دے کر‘ جہاز اڑانے سے انکار کر دیا ہے۔

شہری ہوا بازی کے وزیر اجیت سنگھ نے اس ہڑتال کو غیر قانونی قرار دیا ہے۔ اجیت سنگھ نے ہی گزشتہ ہڑتال ختم کروانے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

اجیت سنگھ نے کہا کہ ’انہوں نے ہڑتال کے لیے کسی طرح کا نوٹس نہیں دیا ہے اور خود کو بیمار قرار دیا ہے۔ اگر انہیں کچھ مشکلات ہیں تو ان کا حل تلاش کرنے کے لیے جو بات چیت چل رہی تھی اسے جاری رکھنا چاہیے تھا‘۔

انہوں نے کہا، ’ایک ایسے وقت میں جب انہیں تیس ہزار کروڑ روپے کا پیکج دیے جانے کا فیصلہ کیا گیا ہے، انہیں یہ خیال رکھنا چاہیے کہ مسافروں کو کسی طرح کی مشکل کا سامنا نہ کرنا پڑے جو فی الحال انہیں ہے۔‘۔

ہڑتال کرنے والے پائلٹ اس فیصلے کی مخالفت کر رہے ہیں جس کے تحت انڈین ایئر لائنز کے پائلٹوں کو ایک نئے قسم کے طیارے پر تربیت دی جانی ہے۔

ہڑتال کا آغاز پیر کی نصف شب اس وقت ہوا جب ایئر انڈیا کے ڈیڑھ سو سے زیادہ پائلٹوں نے بیماری کی درخواست دے کر کام کرنے سے انکار کر دیا۔ کہا جا رہا ہے کہ مزید پائلٹس بھی ان ہڑتالی پائلٹس کا ساتھ دے سکتے ہیں۔

ہڑتال کی وجہ سے منگل کو اڑنے والی کئی بین الاقوامی پروازیں ملتوی کر دی گئی ہیں جبکہ اچانک ہڑتال سے مسافروں کو پریشانی کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔

اسی بارے میں