پی چدامبرم وزیر خزانہ مقرر

پی چدامبرم تصویر کے کاپی رائٹ AFP
Image caption چدامبرم ایک بار پھر سے وزیر خزانہ بنے ہیں

بھارت کے وزیراعظم منموہن سنگھ نے اپنی کابینہ میں بعض اہم تبدیلیاں کی ہیں اور وزیر داخلہ پی چدامبرم کو وزارت خزانہ کی ذمہ داریاں سونپی گئی ہیں۔

سابق وزیر خارجہ پرنب مکھرجی ملک کے نئے صدر بن گئے ہیں جس کے بعد سے یہ وزارت وزیراعظم منموہن سنگھ کے پاس ہی تھی۔

توانائي کے وزیر سوشیل کمار شندے کو ملک کا نیا وزیر داخلہ مقرر کیا گيا ہے اور توانائی کی وزارت وی رپّا موئیلی کو سونپی گئی ہے۔مسٹر موئیلی کے پاس کارپوریٹ افیئر کی وزارت پہلے ہی سے ہے اور توانائي کی وزارت انہیں اضافی ذمہ داری دی گئی ہے۔

اس سے متعلق نوٹیفیکیشن پر صدر نے دستخط کر دیے ہیں اور نئی وزارتیں متعلق وزراء نے سنبھال لیا ہے۔

بھارتی معیشت اس وقت مشکلات کے دور سے گزر رہی ہے ایسے میں اقتصادی صورت حال کو بہتر کرنا ایک نیا چیلنچ ہوگا۔

منگل کے روز ہی افراط زر کی بڑھی ہوئی شرحوں پر حکومت نے تشویش ظاہر کی تھی اور مسٹر چدامبرم کے آنے سے لوگوں کو معاشی پالیسیوں تبدیلی کی توقع ہے۔

سب سے بڑا مسئلہ اپوزیشن کا ہے۔ بھارتیہ جنتا پارٹی پارلیمان میں مسٹر چدامبرم کا بائیکاٹ کرتی رہی ہے اور امکان ہے کہ اپوزیشن جماعتیں ایک بار ان کے خلاف آواز اٹھائیں گی۔

توانائي کا بحران نیا تو نہیں لیکن کرڈ کی ناکامی ایک نیا مسئلہ بن کر ابھرا ہے۔ اطلاعات کے مطابق بعض ریاستوں کی جانب مقررہ مقدار سے زیادہ بجلی لینے کے سبب یہ حالات پیدا ہوئے ہیں اور اسے بھی درست کرنا ایک چيلنج ہوگا۔

آئندہ ہفتے پارلیمان کا مونسون اجلاس شروع ہونے والا ہے اور ظاہر ہے ان تمام مسائل کے سبب اجلاس کے ہنگامہ خيز رہنے کی توقع ہے۔

اسی بارے میں