بھارت:تمام متاثرہ ریاستوں میں بجلی بحال

تصویر کے کاپی رائٹ BBC World Service
Image caption بجلی کی بندش سے تین سو ٹرینوں کی آمد و رفت متاثر ہوئی

بھارت میں حکام کا کہنا ہے کہ ملک میں بجلی کے بڑے بریک ڈاؤن سے متاثرہ تمام علاقوں میں سپلائی بحال کر دی گئی ہے۔

یہ بحران منگل کی دوپہر شمالی گرڈ کی بندش سے شروع ہوا جس کا اثر دارالحکومت دلی سمیت پنجاب، راجستھان، اترپردیش، جموں و کشمیر اور ہریانہ پر پڑا جہاں بجلی کی سپلائی مکمل طور پر بند ہو گئی۔

اسی دوران مشرقی گرڈ کے بھی بند ہونے کی بھی خبر آئی جس سے کئی گھنٹے تک مغربی بنگال کے کچھ علاقوں، اڑیسہ، جھارکھنڈ اور بہار میں بجلی بند رہی۔

ان دونوں گرڈز کے کچھ دیر بعد ہی شامل مشرقی گرڈ بھی ٹرپ کر گیا اور ایک وقت ایسا آیا جب بھارت کی اٹھائیس میں سے بیس ریاستیں اور وہاں کے رہائشی ساٹھ کروڑ کے قریب عوام بجلی سے محروم تھے۔

بھارت کی پاور گرڈ کارپوریشن کے مطابق اس صورتحال میں ہنگامی بنیادوں پر بحالی کا کام شروع کیا گیا اور منگل کی رات تک حالات پر بہت حد تک قابو پا لیا گیا۔

ادارے کے مطابق ابتدائی طور پر منگل کی شب ساڑھے آٹھ بجے تک شمال مشرقی گرڈ کو مکمل طور پر بحال کر دیا گیا جبکہ دلّی میں نوے فیصد علاقوں میں بجلی سپلائی کی جانے لگی تھی۔

پاورگرڈ کارپوریشن کے حکام کے مطابق رات ساڑھے گیارہ بجے تک شمالی گرڈ میں پچھہتر فیصد جبکہ جبکہ مشرقی گرڈ کے چالیس فیصد حصوں میں بجلی بحال کر دی گئی تھی اور بدھ کی صبح تک تمام علاقوں کو بجلی کی فراہمی شروع کر دی گئی۔

خیال رہے کہ شمالی گرڈ چوبیس گھنٹے میں دوسری مرتبہ بند ہوا۔ اتوار کو گرڈ کی بندش سے نو ریاستیں کئی گھنٹے تک بجلی سے محروم رہی تھیں۔

بجلی کی معطلی سے دارالحکومت دلی میں میٹرو ریل سمیت ملک کے کئی حصوں میں ریل کا نظام متاثر ہوا اور تقریباً تین سو ٹرینوں کی آمد و رفت متاثر ہوئی۔

تصویر کے کاپی رائٹ AP
Image caption منگل کی رات تک حالات پر بہت حد تک قابو پا لیا گیا

ریلوے کے ترجمان انیل سكسینا نے بتایا کہ گرڈ کے بند ہونے کا اثر ریلوے پر پڑا تاہم فوری طور پر علاقائی حکام نے انجینئروں کے ساتھ مل کر ریلوے کے اپنے بیک اپ کو سپلائی کے لیے استعمال کیا۔ اس کے علاوہ ہریانہ سے بجلی ملنے کی وجہ سے دہلی آگرہ ممبئی ریل راستے کو بحال کیا گیا۔

منگل کی شب ٹی وی پر ایک بیان میں بھارت کے وزیرِ توانائی سشیل کمار شندے نے کہا ہے کہ گرڈ بند ہونے کی وجہ بعض ریاستوں کا قومی گرڈ سے اپنے حصے سے زیاد بجلی لیا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ وہ ریاستوں سے پہلے بھی ایسا نہ کرنے کی اپیل کر چکے ہیں اور انہوں نے حکام کو ایسی ریاستوں کے خلاف کارروائی کرنے کی بھی ہدایت کی ہے۔

تاہم ریاست اترپردیش میں حکام کا کہنا ہے کہ ایسا ماننے کی کوئی وجہ نہیں کہ اس خرابی کی وجہ وہ ہیں۔ بجلی کی فراہمی کے ریاستی ادارے کے سربراہ انیل گپتا کا کہنا ہے کہ معاملے کی اصل وجہ کا پتہ چلانے کے لیے تحقیقات کی جانی چاہیئیں۔

بھارتی نجی ٹی وی این ڈی ٹی وی کے مطابق ریاست ہریانہ کے وزیرِ بجلی کیپٹن جے سنگھ کا کہنا ہے کہ صرف ان کی ہی ریاست نے گرڈ سے زیادہ بجلی نہیں لی۔ انہوں نے کہا ’ہمیں اس تکنیکی خرابی کے لیے ذمہ دار ٹھہرانا درست نہیں جو گرڈ کی بندش کی وجہ بنی۔ ہم پر اس چیز کا الزام لگ رہا ہے جو سبھی کرتے ہیں‘۔

خیال رہے کہ بھارت میں توانائی کی شدید قلت ہے اور ملک کے بہت سے حصوں میں چھ گھنٹے بھی بجلی نہیں پہنچتی ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ جب تک اس شعبہ میں بڑے پیمانے پر سرمایہ کاری نہیں ہوتی اس وقت تک بجلی کی کمی کو پورا کرنا مشکل ہوگا۔

اسی بارے میں