بھارتی وزیر ولاس راؤ دیش مکھ چل بسے

آخری وقت اشاعت:  منگل 14 اگست 2012 ,‭ 18:43 GMT 23:43 PST
ولاس راؤ دیشمکھ

ولاس راؤ اپنی اچھی انتظامیہ کے لیے جانے جاتے تھے

بھارت کے مرکزی وزیر برائے سائنس و ٹیکنالوجی اور ریاست مہاراشٹر کے سابق وزیراعلیٰ ولاس راؤ دیش مکھ انتقال کرگئے ہیں۔

چند روز قبل سڑسٹھ سالہ ولاس راؤ دیش مکھ کو ناسازئ طبع کی وجہ سے چنئی کے ایک ہسپتال میں داخل کیا گيا تھا۔

ہسپتال آنے کے بعد ہی ڈاکٹروں نے یہ انکشاف کیا تھا کہ ان کے جگر میں کینسر ہے جس کی پیوند کاری کرنی پڑے گی۔

لیکن اس دوران ان کے بعض دیگر اعضاء نے بھی کام کرنا بند کر دیا جس کے بعد ان کی حالت بگڑتی گئی اور وہ منگل کی دوپہر چل بسے۔

ولاس راؤ دیش مکھ کی آخری رسومات ممبئی میں ادا کی جائیں گی۔

ان کے انتقال کی خبر آتے ہی بھارتی پارلیمان کا اجلاس ملتوی کر دیا گیا اور وزیرِاعظم منموہن سنگھ سمیت ملک کے سرکردہ رہنماؤں نے ان کے انتقال پرگہرے صدمے کا اظہار کیا ہے۔

وزیراعظم منموہن سنگھ نے کہا ’وہ کانگریس کے سینیئر رہنما، کابینہ کے ایک گراں قدر ساتھی اور قابل منتظم تھے۔ ہم سب حکومت میں ان کی کمی کو محسوس کریں گے‘۔

ولاس راؤ دیشمکھ کانگریس پارٹی کے سرکردہ رہنماؤں میں سے تھے۔ وہ دو مرتبہ ریاست مہاراشٹر کے وزیراعلیٰ بنے

انہوں نے سوگواروں میں اپنی بیوی ویشالی اور تین بیٹوں کو چھوڑا ہے۔

ان کے ایک بیٹے رتیش دیش مکھ بالی وڈ کے معروف اداکار ہیں جبکہ دوسرے بیٹے امت دیش مکھ سیاست میں ہیں اور وہ مہاراشٹر کی ریاستی اسمبلی کے رکن ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔