بھارت:’مڈنائٹس چلڈرن شاید ریلیز نہ ہو‘

آخری وقت اشاعت:  منگل 11 ستمبر 2012 ,‭ 09:36 GMT 14:36 PST
سلمان رشدی، دیپا مہتا

سلمان رشدی اور دیپا مہتا دونوں ہی بھارت میں متنازع شخصیات ہیں

بھارتی فلم ہدایت کارہ دیپا مہتا کا کہنا ہے کہ سلمان رشدی کی کتاب ’مڈ نائٹس چلڈرن‘ پر مبنی ان کی فلم شاید بھارت میں ریلیز نہ ہو سکے۔

دیپا مہتا نے بھارتی اخبار ’دی ہندوستان ٹائمز‘ کو بتایا کہ ان کی فلم بھارت پر ہی مبنی ہے لیکن ابھی تک ملک میں کوئی ڈسٹری بیوٹر نہیں مل سکا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ ’یہ بڑے افسوس کی بات ہوگی اگر چند سیاستدانوں نے بھارتی قوم کو اس فلم کے بارے میں خود فیصلہ نہ کرنے دیا‘۔

کینیڈا میں اتوار کو ٹورنٹو فلم فیسٹیول میں اس فلم کو نمائش کے لیے پیش کیا جا چکا ہے۔

دیپا مہتا نے اخبار کو بتایا کہ سلمان رشدی ’اکثر کہتے رہے ہیں کہ ان کی کتاب بھارت کے لیے محبت بھرے خطوط پر مبنی ہے اور فلم میں وہی محبت جھلکتی ہے‘۔

اخبار نے اس جانب اشارہ بھی کیا ہے کہ چونکہ سلمان رشدی کی کتاب ’مڈ نائٹس چلڈرن‘ میں بھارت کی سابق وزیراعظم اندرا گاندھی پر نکتہ چینی کی گئی ہے شاید اسی لیے ڈسٹری بیوٹر کا ملنا مشکل ہو۔

"سلمان رشدی اکثر کہتے رہے ہیں کہ ان کی کتاب بھارت کے لیے مبحت بھرے خطوط پر مبنی ہے اور فلم میں وہی محبت جھلکتی ہے۔"

دیپا مہتا

بھارت میں اس وقت حکمراں جماعت کانگریس پارٹی کی حکومت ہے جو گاندھی خاندان کے زیر اثر ہے اور شاید کوئی بھی ڈسٹری بیوٹر اس سے تعلقات خراب کرنا نہ چاہے۔

ویسے فلم ساز دیپا مہتا اور سلمان رشدی دونوں ہی بھارت میں متنازع شخصیات ہیں۔ سلمان رشدی کی کتاب ’سٹینک ورسز‘ پر بھارت میں اب بھی پابندی عائد ہے۔

ان کے خلاف بھارت میں مسلم تنظمیں مظاہرے بھی کرتی رہی ہیں اور وہ گزشتہ جے پور ادبی فیسٹیول میں وہ اسی لیے نہیں آئے تھے۔

دیپا مہتا نے اس سے پہلے خواتین کی ہم جنس پرستی پر مبنی فلم ’واٹر‘ بنائي تھی جس کی شوٹنگ ہندوؤں کے مقدم شہر بنارس میں ہونی تھی لیکن ہندو تنظیموں نے اس کی اجازت نہیں دی تھی۔

بعد میں انہوں نے فلم کی شوٹنگ سری لنکا میں کی۔ سلمان رشدی کی کتاب پر مبنی فلم بھی انہوں نے سری لنکا میں ہی شوٹ کی ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔