بھارت میں جلاوطن تبتی رہنماؤں کا اجلاس

آخری وقت اشاعت:  منگل 25 ستمبر 2012 ,‭ 08:40 GMT 13:40 PST
دلائی لامہ

افتتاحی اجلاس سے جلاوطن تبتی رہنما دلائی لاما خطاب کریں گے

بھارتی ریاست ہماچل پردیش کے دھرم شالہ میں جلا وطن تبتی رہنماؤں کا ایک خصوصی اجلاس منعقد ہو رہا ہے جس میں کئی امور پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

اطلاعات کے مطابق منگل کو شروع ہونے والے اس اجلاس میں تبت میں خود سوزی کے بڑھتے واقعات پر خصوصی توجہ دی جائے گی۔

تین روز تک جاری رہنے والے اس اجلاس میں دنیا بھر سے تبت کے تقریباً چار سو نمائندوں کی شرکت متوقع ہے۔

پچيس سے اٹھائیس ستمبر کے درمیان ہونے والے اس اجلاس میں اس بات پر بھی غور ہوگا کہ چین کی نئی قیادت کے ساتھ تبت کے مسئلے پر بات چيت کے لیے کیا حکمت عملی اپنائی جائے۔

بھارتی خبر رساں ادارے پریس ٹرسٹ آف انڈیا کے مطابق جنرل میٹنگ کا فیصلہ بھارت میں جلا وطن تبتی کابینہ اور پارلیمان نے مشترکہ طور پر اس ماہ کی چودہ اور پندرہ تاریخ کو اپنی ایک اہم اجلاس میں کیا تھا۔

تبت کی پارلیمان کے سپیکر پینپا ٹیسرنگ کا دعویٰ ہے کہ پچاس سے زیادہ تبتّیوں نے خود سوزی کی ہے اور ان کے اہل خانہ انتہائی مشکل حالات میں زندگی گزار رہے ہیں۔

چین کی نئی قیادت

" یہ بالکل بھی واضح نہیں ہے کہ چین کی نئی قیادت تبت کے موجودہ بحران سے کیسے نمٹے گی یا پھر وہ تبت کے مسئلے کے حل کے لیے کیا موقف اختیار کریگی"

پینپا ٹیسرنگ

ان کا کہنا تھا کہ چین کی حکومت نے خود سوزی کی اصل وجوہات کا پتہ کرنے کے بجائے فوجی کارروائیاں کر کے تبت میں لوگوں کو ایسے اقدامات پر مزید اکسایا ہے۔

پینپا ٹریسنگ نے پی ٹی آئی کو بتایا کہ’یہ بالکل بھی واضح نہیں ہے کہ چین کی نئی قیادت تبت کے موجودہ بحران سے کیسے نمٹے گی یا پھر وہ تبت کے مسئلے کے حل کے لیے کیا موقف اختیار کریگی۔‘

ان کا کہنا تھا کہ جلا وطن تبتی لوگ تبت کے مسئلے کی طرف دنیا کی توجہ مبذول کرانے کے لیے اپنی تحریک جاری رکھیں گے۔

پینپا ٹریسنگ کے مطابق ’چونکہ تبت کے مسائل پر عالمی برادری کی جانب سے اب تک کوئي خاطر خواہ قدم نہیں اٹھایا گيا اس لیے ہمیں اپنی تحریک کو مزید مضبوط کرنے کی ضرورت ہے۔‘

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔