سرِعام پیشاب کرنیوالوں کو شرمندہ کرنے کی مہم

آخری وقت اشاعت:  پير 5 نومبر 2012 ,‭ 17:05 GMT 22:05 PST

بھارت کی ریاست راجستان میں لوگوں کو بیت الخلاء کے استعمال کے لیے شرم دلانے کے لیے ایک مہم شروع کی گئی ہے۔

بھارت کی مغربی ریاست میں تیس سے زائد دیہاتوں میں رضا کاروں کو ذمہ دار سونپی گئی ہے کہ وہ ان لوگوں کی نشاندہی کریں جو کھلی جگہوں پر پیشاب اور پاخانہ کرتے ہیں۔

اگر یہ لوگ کسی کو ایسا کرتے پائیں گے تو وہ انہیں روکنے کے بچائے شور مچا دیں گے، سیٹیاں بجائیں گے یا ڈھول پیٹنے لگیں گے۔

ایسا کرنے سے باقی لوگ بھی ان کی طرف متوجہ ہو جائیں گے۔

مقامی حکام کا کہنا ہے کہ لوگوں کی جانب سے کھلی جگہوں پر پیشاب کرنے کے لیے کوئی عذر قابلِ قبول نہیں ہے کیونکہ انہیں بیتالخلاء بنانے کے لیے رقم دی گئی ہے۔

بھارت کے کئی دیہاتوں میں کھلے مقامات پر پیشاب اور پاخانہ کرنا اب بھی عام بات ہے جس کی وجہ سے پیدا ہونے والی آلودگی لوگوں کے لیے شدید طبی مسائل کا باعث بنتی ہے۔

یاد رہے کہ بھارت میں دو ہزار گیارہ میں کی گئی مردم شماری کے مطابق ملک میں تریسٹھ فیصد لوگوں کے پاس ٹیلی فون ہیں لیکن تیز رفتار اقتصادی ترقی کے باوجود تریپن فیصد، یعنی آدھے سے زیادہ گھروں میں آج بھی ٹوائلیٹ نہیں ہیں۔

مردم شماری کے دوران تقریباً ساڑھے چوبیس کروڑ گھروں میں لوگوں سے یہ سوال پوچھےگئے تھے۔ گیارہ لاکھ گھروں میں آج بھی بجلی نہیں ہے اور دیہی علاقوں میں پچاسی فیصد گھرانے ایندھن کے لیے لکڑی یا گوبر کا استعمال کرتے ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔