انا ہزارے ایک بار پھر میدان میں اتر آئے

آخری وقت اشاعت:  ہفتہ 10 نومبر 2012 ,‭ 17:38 GMT 22:38 PST
انّا ہزارے کی ٹیم میٹنگ

انّا ہزارے نے دلی میں بدعنوانی کے خلاف ملک گیر دورے کی بات کہی ہے۔

بھارت کے سماجی کارکن انّا ہزارے بدعنوانی کے خلاف اپنی تحریک کو از سر نو شروع کرنے کے اعلان کے ساتھ ایک بار پھر میدان میں اترے ہیں۔

دلی میں اپنی تحریک کا بگل بجاتے ہوئے انھوں نے چالیس ارکان پر مشتمل ایک ٹیم بنانے کا بھی اعلان کیا ہے۔

انّا ہزارے نے آئندہ سال تیس جنوری سے ریاست بہار کے دارالحکومت پٹنہ کے گاندھی میدان سے ملک سے بدعنوانی کے خاتمے کے لیے ملک بھر کا دورہ شروع کرنے کا بھی اعلان کیا ہے۔ انا نے کہا کہ ٹیم انّا میں مسلم اور قبائلی لیڈروں کو بھی شامل کیا جائے گا۔

سنیچر کو دلی میں ہونے والی ان کی ٹیم میٹنگ کے بعد انھوں نے نامہ نگاروں سے خطاب کرتے ہوئے کہا: ’ٹیم انّا کو ٹوٹے ہوئے دو مہینے ہو گئے۔ ان دو مہینوں میں لوگ یہ لگنے لگے کہ انّا کی تحریک رک سی گئی ہے۔ لیکن در حقیقت یہ کبھی رکی نہیں تھی اور نہ ہی سست پڑی تھی۔ لوگوں کی اسی تشویش کو دور کرنے کے لیے ہم نے تیرہ لوگوں کی میٹنگ بلائی تھی۔‘

اس میٹنگ کے بعد جن پانچ نئے ارکان کو ٹیم میں جگہ ملی ہیں ان میں وشمبر چودھری، اویناش، دھرمادھیكاري، ششی كانت اور اکشے کمار شامل ہیں۔ باقی چالیس اراکین کے نام کا اعلان ٹیم کے صلاح مشورے کے بعد ایک ماہ میں کر دیا جائے گا۔

اس میٹنگ میں یہ فیصلہ کیا گیا کہ ملک بھر میں رضاکار تعینات کیے جائیں گے۔ ہر ریاست میں تقریبا پچاس رضا کار ہوں گے جن کو تربیت بھی دی جائے گی۔

نام پر جھگڑا نہیں۔۔۔

"تحریک شروع سے ہی انڈیا اگینسٹ کرپشن رہی ہے۔ وہ (اروند كےجريوال) بھی اس نام کا استعمال کر رہے ہیں۔ وہ یہ نام ہمیں دیتے ہیں یا نہیں یہ الگ معاملہ ہے لیکن نام ہمارا ہی ہے۔ ہم نام کے لیے جھگڑا نہیں کریں گے"

انا ہزارے

انّا نے کہا کہ اتوار کو دلی کے سروودے انکلیو علاقے میں ٹیم انّا کے آفس کا افتتاح کیا جائےگا تاکہ رضاکاروں جمعہ ہونے کے لیے ایک جگہ مل سکے۔

انّا نے کہا کہ انہوں نے سابق فوجی صدر جنرل وی کے سنگھ کو بھی اس میٹنگ کے لیے دعوت دی تھی لیکن وہ اس میٹنگ میں شامل نہیں ہو سکے اور شام کو انّا سے ملاقات کریں گے۔

اس موقع سے حکومت پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ ’حکومت بدعنوانی سے پاک حکومت نہیں چاہتی۔ انّا نے کہا کہ ملک کو انگریزوں نے اتنا نہیں لوٹا جتنا حکومت نے گزشتہ ساٹھ سال میں لوٹا ہے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔