بھارت: پٹاخہ فیکٹری میں دھماکہ، آٹھ ہلاک

آخری وقت اشاعت:  منگل 13 نومبر 2012 ,‭ 14:30 GMT 19:30 PST
پٹاخوں کی ایک فیکٹری کی فائل فوٹو

ایک ماہ پہلے ہی ریاست تمل ناڈو میں پٹاخوں کی ایک فیکٹری میں آتشزدگی سے باؤن افراد ہلاک ہو گئے تھے

بھارت کی شمالی ریاست اتر پردیش میں پٹاخے تیار کرنے والی ایک فیکٹری میں دھماکے کے نتیجے میں کم از کم آٹھ افراد ہلاک ہو گئے ہیں۔

پٹاخے تیار کرنے والی فیکٹری ریاست اتر پردیش کے ضلع اوریا میں واقع تھی اور اس میں غیر قانونی طور پر پٹاخے تیار کیے جا رہے تھے۔

اطلاعات کے مطابق ہلاک ہونے والوں میں خواتین اور بچے بھی شامل ہیں۔

بھارت میں منگل کو دیوالی کا تہوار منایا جا رہا ہے جس میں ہندو برادری آتش بازی کے ساتھ جشن مناتی ہے۔

خبر رساں اداروں نے ایک اعلیٰ پولیس اہلکار کے حوالے سے کہا ہے کہ اس چھوٹی سی فیکٹری میں کام کرنے والے لوگ پٹاخوں کی پیکنگ میں مصروف تھے کہ دھماکہ ہوگیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ دھماکے کی وجہ ابھی معلوم نہیں ہو سکی ہے لیکن اس کی شدت اتنی زیادہ تھی کہ قریب کے دو مکانات بھی تباہ ہو گئے۔

بتایا جاتا ہےکہ یہ فیکٹری مقامی پولیس تھانے سے صرف پچاس میٹر کے فاصلے پر واقع تھی اور اسے بند نہ کرانے پر آٹھ پولیس والوں کو معطل کر دیا گیا ہے۔

تین روز قبل ودودرا شہر میں پٹاخوں کا ایک عارضی بازار جل کر تباہ ہو گیا تھا۔

دلی میں منگل کی رات آتش بازی کے دوران کسی بھی ممکنہ صورتحال سے نمٹنے کے لیے فائر بریگیڈ کے تمام ملازمین کی چھٹیاں منسوخ کر دی گئیں ہیں۔

واضح رہے کہ رواں برس ستمبر میں ریاست تمل ناڈو کے شہر شیو کاسی میں پٹاخوں کی ایک فیکٹری میں آگ لگنے سے کم از کم باؤن افراد ہلاک ہوگئے تھے۔

ہلاک ہونے والوں میں زیادہ تر فیکٹری ملازمین تھے۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔