سولہ سالہ لڑکے کی فیس بک پر اعلان کے بعد خودکشی

آخری وقت اشاعت:  منگل 4 دسمبر 2012 ,‭ 10:06 GMT 15:06 PST
شانتونو نیگی

شانتونو ایک ہونہار طالب علم تھا۔

بھارت کی ریاست اتراکھنڈ کے شہر دہرادون کے ہائی پروفائل ایشئن سکول کے سولہ سالہ طالب علم شانتونو نیگی نے فیس بک پر پیغام دے کر خودکشی کر لی۔

چند روز پہلے شانتونو نے اپنی فیس بک وال پر یہ پیغام لکھا تھا ’لِو لائف لائک دیئر از نو ٹومارو‘ یعنی زندگی ایسے جیو جیسے آج کا دن آخری دن ہو۔

اس پیغام کو پڑھنے کے بعد ان کے دوستوں کو اس بات کا ذرا بھی اندازہ نہیں تھا کہ شانتونو کے دل و دماغ میں کیا چل رہا ہے اور وہ کسی مایوسی کا شکار ہیں کہ انہوں نے خودکشی کرلی۔

تین دسمبر کو شانتونو نے خودکشی کی اور اس سے تھوڑی دیر پہلے انہوں نے بے حد فلمی انداز میں فیس بک پر اپنی خودکشی کی تحریر لکھ کر اس بات کا اعلان کیا کہ وہ اس دنیا کو الوداع کہہ رہے ہیں۔

انہوں نے اپنے فیس بک پیغام میں لکھا تھا ’بائے ایوری ون۔ آئی ول مس یو۔ آئی کوئٹ۔‘ یعنی الوداع دوستو۔ مجھ تمہاری یاد آئے گی۔ میں تو چلا۔‘

اس پیغام کو پڑھنے کے بعد شروع میں شانتونو کے دوستوں نے سمجھا کہ وہ مذاق کررہا ہے اس لیے اس پیغام پر جو بھی تبصرے کیے گئے وہ مزاحیہ ہی تھے۔

شانتونو کے اس پیغام کے جواب میں ان کے دوست نے لکھا ’اتنی جلدی سوسائڈ نہ کر۔‘

اس کے جواب میں ایک دیگر دوست نے لکھا ہے ’رہنے دے۔ اس کی کل کے امتحان کی تیاری نہیں ہے۔ ڈر گیا ہے۔‘

ایک طرف شانتونو کے دوست اس کے فیس بک پیغام کا مذاق اڑا رہے تھے دوسری جانب شانتونو پھانسی لگا کر خودکشی کرچکا تھا۔

شانتونو کی خودکشی کی خبر تیزی سے پھیل گئی اور ان کے فیس بک پر ان کے دوست اور دیگر لوگوں کی جانب سے تعزیاتی پیغامات آرہے ہیں۔

شانتونو نیگی دہرادون کے ہائی پروفائل سکول ایشئن سکول میں گیارویں جماعت کے طالب علم تھے۔ دسویں درجے کے امتحانات میں انہوں نے نوے فی صد نمبر حاصل کیے تھے۔

اطلاعات کے مطابق ان دنوں ان کا دل پڑھائی سے ہٹ گیا تھا۔ ان کے والد پشکر نیگی کا کہنا ہے کہ انہیں اس بارے میں بتایا گیا تھا حالانکہ ان پر پڑھائی کرنے کا کوئی دبا‎ؤ نہیں تھا۔

دوسری جانب شانتونو کے سکول کی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ شانتونو کے بارے میں کبھی کوئی شکایت نہیں آئی تھی۔

شانتونو کی فیس بک پروفائل پر نظر ڈالنے سے معلوم ہوتا ہے کہ وہ بے حد ہنس مکھ، بےباک اور خوبصورت نوجوان تھے۔ انہوں نے فیس بک پر اپنی بہت ساری تصاویر شائع کی ہیں جن میں وہ مختلف انداز میں نظر آتے ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔