کولکتہ کے بازار میں آتشزدگی، 19 افراد ہلاک

آخری وقت اشاعت:  بدھ 27 فروری 2013 ,‭ 04:39 GMT 09:39 PST
آگ (فائل فوٹو)

کولکاتہ کا سوریہ سین بازار غیر قانونی ہے۔

مغربی بنگال کے مرکزی شہر کولکتہ کے سيالدہ علاقے میں واقع سوريہ سین بازار میں آگ لگنے سے انیس افراد کے ہلاک ہونے کی خبر ہے۔

مغربی بنگال کی وزیر اعلی ممتا بینرجی نے مہلوکین کے لیے دو دو لاکھ اور زخمیوں کے لیے پچاس پچاس ہزار روپے معاوضے کا اعلان کیا ہے۔

کولکتہ پولیس کنٹرول روم نے ہلاکتوں کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ مرنے والوں کی تعداد میں اضافے کا خدشہ ہے کیونکہ ابھی بھی اس بازار میں کئ افراد پھنسے ہوئے ہیں۔

بہرحال پولیس نے زخمیں کی تعداد کے بارے میں کچھ نہیں بتایا ہے۔ بی بی سی کے نامہ نگار امیتابھ بھٹّاسالی کا کہنا ہے کہ زخمیوں کو قریبی ہسپتالوں میں داخل کیا گیا ہے۔

جائے وقوع پر آگ بجھانے کے لیے پچیس گاڑیاں پانی کے ساتھ موجود ہیں اور تقریبا تین گھنٹے بعد آگ پر قابو پایا لیا گیا ہے اور امدادی کاروائی جاری ہے۔

ہمارے نامہ نگار نے بتایا کہ آگ کا شکار اور اس میں پھنسے لوگ وہی ہیں جو کام کے بعد رات کو وہیں سو جایا کرتے تھے۔

آگ بدھ کی صبح تقریبا چار بجے لگی جب کہ کافی لوگ ابھی بیدار بھی نہیں ہوئے تھے۔ آتشزدگی کی وجہ شارٹ سرکٹ بتائی جا رہی ہے۔ اس آتشزدگی میں کس قدر نقصان ہوا ہے اس کے بارے میں پولیس ابھی تفتیش کر رہی ہے۔

پولیس کے مطابق یہ پورا کمپلکس غیر قانونی طور پر بنا ہے۔ یہ بازار سات منزلہ عمارت پر مشتمل ہے اور اس میں دکانوں کے ساتھ ساتھ دفاتر بھی ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔