مودی کا امریکی فورم سے خطاب منسوخ

آخری وقت اشاعت:  پير 4 مارچ 2013 ,‭ 05:03 GMT 10:03 PST
نریندر مودی

نریندر مودی کو امریکہ ویزا نہ دینے کی پالیسی پر عمل پیرا ہے

گجرات کے وزیراعلیٰ نریندر مودی امریکہ میں وارٹن انڈیا اكانومك فورم کے اجلاس سے ویڈیو كانفرنسنگ کے ذریعے خطاب کرنے والے تھے، جسے اب منسوخ کر دیا گیا ہے۔

خیال کیا جا رہا ہے کہ یہ فیصلہ بعض حلقوں سے پڑنے والے دباؤ کے سبب کیا گیا ہے۔

فورم نے اس بابت اپنے ایک بیان میں کہا ہے: ’ہم کسی مخصوص سیاسی نظریات کی حمایت نہیں کرتے، ہمارا مقصد صرف ایک ٹیم کے طور پر بھارت کی معاشی ترقی پر معنی خیز مذاکرات کو فروغ دینا ہے۔‘

امریکی ریاست فلاڈیلفیا میں 22 سے 23 مارچ تک ہونے والے اس دو روزہ اجلاس کو مودی ویڈیو كانفرنسنگ کے ذریعے خطاب کرنے والے تھے۔

فورم نے کہا ہے کہ ان کے خطاب کے پروگرام کو منسوخ کر دیا گیا ہے۔

واضح رہے کہ گجرات میں سنہ 2002 میں ہوئے فسادات کے لیے مودی کے کردار پر اکثر سوال اٹھائے جاتے رہے ہیں اور اسی وجہ سے امریکہ برسوں سے انہیں ویزا نہ دینے کی پالیسی پر عمل پیرا ہے۔

مناسب قدم

"ہم سمجھتے ہیں کہ (ان کے خطاب کو منسوخ کرنے کا) یہ فیصلہ بہت سے شرکاء کے ردعمل کے پیش نظر مناسب قدم ہے۔"

وارٹن فورم

البتہ گذشتہ دنوں مودی کے تئیں مغربی ممالک کے رویے میں نرمی آئی ہے اور یورپی یونین کے ممالک نے مودی کا بائیکاٹ ختم کر دیا ہے۔

فورم کے بیان میں کہا گیا ہے کہ طلبہ کی یہ تنظیم مودی کی کارکردگی، ان کی حکومت کے نظریات اور ان کی قیادت سے بہت متاثر ہے اور اسی لیے انہیں فورم سے خطاب کرنے کی دعوت دی گئی تھی۔

مودی کے پروگرام کو منسوخ کرنے پر وضاحت کرتے ہوئے فورم نے کہا: ’ہم سمجھتے ہیں کہ (ان کے خطاب کو منسوخ کرنے کا) یہ فیصلہ بہت سے شرکا کے ردعمل کے پیش نظر ایک مناسب قدم ہے۔‘

بھارت کی اہم حزب اختلاف بی جے پی میں مودی کو وزیرِاعظم کے عہدے کے دعویدار کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔ اتوار کو دلی میں ختم ہونے والی بی جے پی کی قومی کونسل کے اجلاس میں انہوں نے ایک پرزور تقریر کے ذریعے ایک طرح سے انتخابی سرگرمی کا اعلان کر دیا اور بر سر اقتدار کانگریس پارٹی کو ’دیمک‘ سے تعبیر کیا۔

سنہ 1996 میں قائم ہونے والے وارٹن انڈیا اكانومك فورم کو بھارت پر مرکوز سب سے بڑی اور اہم تجارتی کانفرنسوں میں سے ایک مانا جاتا ہے جس کے تحت بھارت میں موجود امکانات اور مسائل پر بحث ہوتی ہے۔

اس بار اس کانفرنس میں مرکزی انفارمیشن ٹیکنالوجی کے ریاستی وزیر ملند گوڑا، اداني گروپ کے گوتم اداني، اداکارہ شبانہ اعظمی اور شاعر اور سکرپٹ رائٹر جاوید اختر کو مدعو کیا گیا ہے۔

اس سے پہلے بھارت کے سابق صدر ڈاکٹر اے پی جے عبدالکلام، مرکزی وزیر پی چدمبرم، بی جے پی کے نوجوان رہنما ورون گاندھی اور صنعت کار انل امبانی اس فورم سے خطاب کر چکے ہیں۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔