ملک مذہب، نظریے سے بالاتر ہے:مودی

آخری وقت اشاعت:  اتوار 10 مارچ 2013 ,‭ 06:15 GMT 11:15 PST
نریندر مودی

نریندر مودی کو امریکہ ویزا نہ دینے کی پالیسی پر عمل پیرا ہے

بھارتی ریاست گجرات کے وزیراعلیٰ نریندر مودی کا کہنا ہے کہ ملک کے شہریوں کو ہر فیصلے میں بھارت کے مفاد کو ترجیح دینی چاہیے اور سیکولرازم کی بنیاد یہی ہے کہ جو بھی کام کیا جائے وہ بھارت کے لیے ہو۔

انہوں نے کہا کہ ’ملک تمام مذاہب اور نظریات سے بالاتر ہے۔ ہمارا مقصد بھارت کی ترقی ہونی چاہیے اور سیکولر ازم اپنے آپ ہم سے منسلک ہو جائے گا۔‘

نریندر مودی نے یہ بات ویڈیو كانفرنسنگ کے ذریعے امریکہ اور کینیڈا کے غیرمقیم ہندستانیوں سے خطاب کرتے ہوئے کہی۔ ان کا کہنا تھا کہ گجرات میں ریاستی ترقی کو سیاست سے بالاتر رکھا گیا ہے۔

مودی ریاست میں سرمایہ کاری کے لیے بیرونِ ملک مقیم ہندستانیوں سے رابطہ کرنے کی ہر ممکن کوشش کرتے رہے ہیں لیکن گجرات فسادات میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں میں ان کی مبینہ کردار کی وجہ سے وہاں اب بھی ان کی مخالفت میں آوازیں اٹھتی رہتی ہیں۔

اسی وجہ سے امریکہ برسوں سے انہیں ویزا نہ دینے کی پالیسی پر بھی عمل پیرا ہے البتہ گذشتہ دنوں مودی کے تئیں مغربی ممالک کے رویے میں نرمی آئی ہے اور یورپی یونین کے ممالک نے مودی کا بائیکاٹ ختم کر دیا ہے۔

گزشتہ ہفتے امریکہ میں وارٹن انڈیا اكنامك فورم میں ان کی اہم تقریر مخالفت میں ایک آن لائن پٹیشن سامنے آنے کے بعد، منسوخ کر دی گئی تھی۔

اتوار کو اپنی ویب کانفرنس میں نریندر مودی نے کہا کہ 21 ویں صدی میں پوری دنیا کی نظریں بھارت پر ٹكي ہیں۔

بھارت میں حزب اختلاف کی اہم جماعت بی جے پی میں مودی کو آئندہ وزیرِاعظم کے دعویدار کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔

گزشتہ اتوار کو دلی میں ختم ہونے والی بی جے پی کی قومی کونسل کے اجلاس میں انہوں نے ایک پرزور تقریر کے ذریعے ایک طرح سے انتخابی سرگرمی کا اعلان کیا اور بر سر اقتدار کانگریس پارٹی کو ’دیمک‘ سے تعبیر کیا تھا۔

اسی بارے میں

متعلقہ عنوانات

BBC © 2014 بی بی سی دیگر سائٹوں پر شائع شدہ مواد کی ذمہ دار نہیں ہے

اس صفحہ کو بہتیرن طور پر دیکھنے کے لیے ایک نئے، اپ ٹو ڈیٹ براؤزر کا استعمال کیجیے جس میں سی ایس ایس یعنی سٹائل شیٹس کی سہولت موجود ہو۔ ویسے تو آپ اس صحفہ کو اپنے پرانے براؤزر میں بھی دیکھ سکتے ہیں مگر آپ گرافِکس کا پورا لطف نہیں اٹھا پائیں گے۔ اگر ممکن ہو تو، برائے مہربانی اپنے براؤزر کو اپ گریڈ کرنے یا سی ایس ایس استعمال کرنے کے بارے میں غور کریں۔