کرناٹک:سدّھارميّا وزیراعلیٰ منتخب

کے سدّھا رمیّا
Image caption کے سدّھا رمیّا اس سے قبل دو بار کرناٹک کے وزیر اعلی رہ چکے ہیں

بھارت کی جنوبی ریاست کرناٹک میں کانگریس نے واضح اکثریت حاصل کرنے کے بعد سدّھا رميّا کو وزیراعلیٰ منتخب کر لیا ہے۔

سدّھا رمیّا کا تعلق ریاست کی اہم پسماندہ ذات کروبا گوڑا سے ہے اور وہ اس کے بڑے رہنما تصور کیے جاتے ہیں۔

اس سے قبل وہ ریاست میں حزب اختلاف کے رہنما تھے اور دو بار کرناٹک کے وزیراعلیٰ بھی رہ چکے ہیں۔ لیکن اس زمانے میں وہ جنتا دل اور جنتا دل (سیکولر) پارٹی میں شامل تھے۔

خیال رہے کہ سدّھا رميّا نے وزیر اعلیٰ کے عہدے کے لیے پہلے بھی دعویدار رہے ہیں تاہم انہوں نے اس کے ساتھ یہ بھی کہا تھا کہ وزیراعلیٰ کا فیصلہ کانگریس چیف سونیا گاندھی پر چھوڑ دینا چاہیے۔

کرناٹک میں وزیراعلیٰ کے انتخاب کے لیے کانگریس نے خفیہ ووٹنگ کا سہارا لیا۔

کانگریس کے چار رہنماؤں اے کے انٹونی، مدھسودن مستری، لوئیزینو فلیریو اور جيتندر پرساد کو مبصر کے طور پر وزیراعلیٰ کے انتخاب کے لیے کرناٹک بھیجا گیا تھا۔

مرکزی وزیر ایم ملكارجن كھگڑے کو بھی وزیراعلیٰ کے عہدے کا دعویدار مانا جا رہا تھا لیکن آخر کار بازی سدّھارميّا کے ہاتھ لگی۔

ریاست کرناٹک میں پانچ مئی کو ووٹ ڈالے گئے تھے اور بدھ یعنی آٹھ مئی کو ان کے نتائج کا اعلان کیا گیا جس میں کانگریس نے نمایاں کامیابی حاصل کی۔

224 رکنی اسمبلی میں کانگریس نے 121 سيٹوں پر کامیابی حاصل کی اور ریاست میں برسر اقتدار جماعت بی جے پی جو دوسری بار حکومت میں آنے کی کوشش میں تھی اسے صرف 40 سیٹوں پر اکتفا کرنا پڑا اور اسے 70 سیٹوں کا خسارہ اٹھانا پڑا۔