نریندرمودی بی جے پی کی انتخابی مہم کے سربراہ مقرر

Image caption راجناتھ سنگھ نے مودی کو انتخابی مہم کا سربراہ مقرر کیا

بھارت میں دائیں بازو کی قدامت پسند حزب اختلاف کی جماعت بھارتیہ جنتا پارٹی نےگجرات کے وزیراعلیٰ نریندر مودی کو اپنی انتخابی مہم کے لیے حمکت عملی کی تشکیل کے لیے بنائی گئی کمیٹی کا سربراہ مقرر کیا ہے۔

مغربی ریاست گوا میں پارٹی کی دو روزہ قومی ایگزیکٹو میٹنگ کے اختتام پر بی جے پی کے صدر راجناتھ سنگھ نے اس کا اعلان کیا۔

پارٹی کے صدر نے ایک مختصر بیان میں کہا ’بھارتیہ جنتا پارٹی آئندہ ہونے والے پارلیمانی انتخابات کو ایک چیلنچ مانتی ہے اور فتح کا عہد کر کے ہم آگے بڑھ رہے ہیں۔‘

’پوری انتخابی مہم کو مدنظر رکھتے ہوئے آج میں نے گجرات کے وزیراعلیٰ نریندر مودی کو انتخابی مہم کی کمیٹی کا چیئرمین مقرر کرنے کا اعلان کیا ہے‘۔

گجرات کے وزیراعلیٰ نریندر مودی تین بار گجرات کے ریاستی انتخابات میں کامیابی حاصل کر چکے ہیں۔ لیکن ان پر ریاست میں دو ہزار دو کے مسلم کُش فسادات میں ملوث ہونے کے الزام لگتے رہے ہیں۔

اس حوالے سے وہ ایک متنازع شخصیت ہیں اور بہت سے لوگ کہتے ہیں کہ مودی ان فسادات کے ذمہ دار ہیں۔

لیکن گجرات میں کامیابیوں کے سبب بی جے پی کارکنان انہیں پارٹی کی جانب سے آئندہ عام انتخابات میں وزارت عظمیٰ کا امیدوار بنانے کا مطالبہ کرتے رہے ہیں۔

خود مودی بھی اس کوشش میں رہے ہیں اور یہ اعلان اس سمت میں ایک اور قدم ہے اور اب اس بات کے امکان مزید روشن ہوگئے ہیں کہ پارٹی انہیں انتخابات میں آئندہ وزیراعظم کے طور پر پیش کریگي۔

بھارتی ذرائع ابلاغ میں گزشتہ چند روز سے اس سے متعلق زبردست بحث چھڑی ہے اور اس پہلو پر زیادہ زور تھا کہ اس معاملے میں بی جے پی کے کئی سینیئر رہنما نریندر مودی کے مخالف ہیں۔

گوا کی اس میٹنگ میں پارٹی کے سرکردہ رہنما لال کرشن اڈوانی، جسونت سنگھ اور یشونت سنہا جیسے کئی سینیئر رہنما شریک نہیں ہوئے جس کی وجہ سے اس طرح کی قیاس آرائیوں میں اضافہ ہوا۔

لیکن پارٹی کے صدر کے اعلان کے بعد کئی رہنماؤں نے ان قیاس آرائیوں کو غلط قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ فیصلہ متفقہ طور پر کیا گيا ہے۔

نریندر مودی نے اتوار کو بھگوا رنگ کا لباس پہن رکھا تھا اور جب اس کا اعلان ہوا تو کارکنان کی بڑی تعداد نے انہیں مبارک باد پیش کی۔

کئی رہنماؤں نے ان کی حمایت میں بیانات بھی جاری کیے لیکن میڈیا کی جانب سے بار بار یہی سوال اٹھتا رہا کہ کیا مودی کا بطور وزارت عظمیٰ کے امیدوار کا اعلان کب کیا جائے گا۔

اکثر رہنماؤں نے اس سوال کو نظر انداز کر دیا اور کہا کہ وقت آنے پر اس کا بھی معلوم ہو جائے گا۔

اسی بارے میں