اتراکھنڈ سیلاب:تین ہزار افراد تاحال لاپتہ

Image caption فوجی دور دراز علاقوں میں پھنسے لوگوں کو نکالنے کی کوشش میں جنگی پیمانے پر جٹے ہوئے ہیں

بھارت کی شمالی ریاست کے اتراکھنڈ وزیراعلیٰ وجے بہوگنا کا کہنا ہے کہ سیلاب اور بارشوں سے متاثرہ علاقوں میں اب بھی تین ہزار کے قریب افراد لاپتہ ہیں۔

بارشوں اور سیلاب میں آٹھ سو سے زائد ہلاکتوں کی تصدیق ہو چکی ہے لیکن وزیراعلیٰ وجے بہوگنا کے مطابق ہلاکتوں کی اصل تعداد کے بارے میں شاید ہی کبھی معلوم ہو سکے۔

اطلاعات کے مطابق بدری ناتھ کے علاقے میں اب بھی سینکڑوں افراد پھنسے ہوئے ہیں جبکہ ایک لاکھ سے زائد افراد کو متاثرہ علاقوں سے نکالا گیا ہے۔

بھارت کے سرکاری خبررساں ادارے پی ٹی آئی سے بات کرتے ہوئے وزیراعلیٰ وجے بہوگنا نے کہا کہ’ہمیں یہ معلوم نہیں ہو سکے گا کہ کتنی ہلاکتیں ہوئیں، کتنے لوگ ملبےتک دبے ہوئے ہیں یا پانی میں بہہ گئے۔‘

’میری معلومات کے مطابق اب بھی تین ہزار لوگ لاپتہ ہیں،ہم نے ان افراد کے اہلخانہ کی مالی مدد کی ہے اور انہوں نے ہمیں تحریری بیان دیا ہے کہ ان کے پیارے تیس سے زیادہ دن ہو گئے ہیں،گھروں کو واپس نہیں آئے ہیں۔‘

ریاست کے دارالحکومت دہرہ دون میں لاپتہ افراد کے اہلخانہ اپنے پیاروں کی تصویروں کے ساتھ جمع ہیں۔

اطلاعات کے مطابق بارشوں سے بری طرح متاثر ہونے والے علاقے بدری ناتھ میں نو سو ہندو زائرین پھنسے ہوئے ہیں اور پیر کو انہیں وہاں سے نکالنے کے لیے امدادی آپریشن شروع کیا جائے گا۔

بھارت ناگہانی آفات سے نمٹنے کے محکمے ڈیزاسٹر مینجمنٹ کے وزیر نے کہا تھا کہ اچانک آ جانے والے سیلاب کے نتیجے میں ہونے والی ہلاکتیں ہزار سے زیادہ ہو سکتی ہیں۔

Image caption لاپتہ افراد کے اہلخانہ اپنے پیاروں کے انتظار میں ریاستی دارالحکومت میں جمع ہیں

دوسری جانب حکام کا کہنا ہے کہ اب چونکہ بدری ناتھ میں کم لوگ بچ گئے ہیں اس لیے اب امدادی سرگرمیوں کا محور رودرپریاگ، چمولی اور اترکاشی کے اضلاع ہیں۔

دریں اثنا ندیوں میں پانی کی سطح میں اضافہ درج کیا جا رہا ہے۔

بھارت کے موسمیات کے شعبے نے بتایا ہے کہ یہ اضافہ گلیشیئر کے پگھلنے کے سبب ہے۔

یاد رہے کہ یہ سیلاب جون کی 16 تاریخ کو آیا تھا۔ ریاست کے وزیراعلیٰ نے کہا ہے کہ آثارِ قدیمہ کے محکمے کو اس سیلاب سے ہونے والے نقصانات کا تخمینہ لگانے کی ذمہ داری دی گئی ہے۔

اسی بارے میں