بھارتی مہاراجہ کا ڈنر سیٹ 30 لاکھ ڈالر میں نیلام

Image caption مہارجہ کے ڈنر سیٹ میں مچھلی کے لیے علیحدہ برتن ہیں تو گوشت کے لیے علیحدہ

بھارت کی سابقہ شاہی ریاست پٹیالہ کے مہاراجہ کے ایک ڈنر سیٹ کی لندن میں نیلامی ہوئی۔

لندن کے نیلام گھر کرسٹی نے بتایا کہ ایک شخص نے اس شاہی ڈنر سیٹ کو تیس لاکھ امریکی ڈالر یعنی اٹھارہ کروڑ روپے خرید لیا ہے۔ خریدنے والے کا نام ظاہر نہیں کیا گيا ہے۔

اس سے قبل کرسٹی کا اندازہ تھا کہ اس 500 کلو گرام وزنی ڈنر سیٹ کی نیلامی سے تقریبا نو کروڑ سے ساڑھے تیرہ کروڑ روپے تک کی آمدن ہو سکتی ہے لیکن بولی اس سے کہیں زیادہ لگی۔

کرسٹی نیلام گھر کے مطابق 1400 برتنوں والے اس ڈنر سیٹ کا ہر برتن بے مثال ہیں اور ان پر نقرئی پانی چڑھا ہوا ہے۔

اس دنر سیٹ میں میٹھے کھانے کے لیے 148 طشتریاں ہیں جبکہ کھانے کے لیے 180 رکابیاں ہیں اور سوپ کے لیے 37 سیٹوں پر مبنی پیالے ہیں۔

اس کے علاوہ یہ تمام برتن شاندار نقش و نگار سے مزین ہیں جن میں ماہرانہ کاریگری اور میناکاری نظر آتی ہے۔

سنہ 1922 میں برطانوی شاہزادے پرنس آف ویلز کے شاہی ریاست کے دورے کے اہتمام میں پٹیالہ کے مہاراجہ بھوپندر سنگھ نے ضیافت کے لیے اس ڈنر سیٹ کو بطور خاص تیار کروایا تھا۔

یاد رہے کہ بعد میں پرنز آف ویلز ہی کنگ ایڈورڈ ہشتم بنے۔

کرسٹی کا کہنا ہے کہ ’اس کے ہر برتن پر کے کنارے کنارے بیل بوٹے بنے ہوئے ہیں اور جانوروں کے پینل ہیں جنہیں کٹار سے علیحدہ کیا گیا ہے یا پھر دوسرے ہتھیاروں اور تاجوں یا پھر دستخطوں کے ذریعے ممیز کیا گیا ہے۔‘

ایک نقش سے دوسرے نقش کو علیحدہ کرنے کے لیے پینل کندہ ہیں اور ان کے لیے اسلحوں کی تصاویر کا استعمال کیا گیا ہے۔

بی بی سی کو جاری ایک بیان میں کرسٹی نیلام گھر نے کہا کہ یہ نیلامی گھر کی انتہائی مخصوص اور ’غیر معمولی سیل‘ ہے جس کے تحت اسے فروخت کیا جا رہا ہے۔

کھانے کے برتنوں کا یہ شاندار نمونہ مہاراجہ کے رنگا رنگ اور پر عشرت طرز زندگی کا عکاس ہے۔

وہ پہلے ہندوستانی تھے جن کے پاس اپنا ہوائی جہاز ہوا کرتا تھا۔ وہ اُن کا شمار بھارت میں گاڑیوں کے شوقین افراد میں ہوتا تھا۔

ان کی گاڑیوں کے قافلے میں 20 رولس رائس گاڑیاں ہوا کرتی تھیں۔

اسی بارے میں